Monday, September 28, 2020  | 9 Safar, 1442
ہوم   > پاکستان

سزامعطلی کی صورت میں مجرم اپنےعہدےپربحال نہیں ہوسکتا،سپریم کورٹ

SAMAA | - Posted: Jul 27, 2020 | Last Updated: 2 months ago
Posted: Jul 27, 2020 | Last Updated: 2 months ago

سپریم کورٹ نےکرپشن میں سزا یافتہ افراد کیلئے سخت حکم دیتے ہوئے کہا ہے کہ سزا معطلی کی صورت میں مجرم اپنے عہدے پر بحال نہیں ہوسکتا۔عدالت نےواضح کردیا کہ سزا معطل ہونے کا یہ مطلب نہیں کہ جرم ختم ہوگیا۔

پیر کو نیب کےمجرم طاہر عتیق صدیقی کی بحالی کیخلاف حکومتی اپیل پر سماعت ہوئی۔ ڈپٹی اٹارنی جنرل سہیل محمود نے بتایا کہ فون انڈسٹریزکے ڈپٹی جی ایم طاہر صدیقی کو غیرقانونی ٹھیکہ دینے کے الزام میں سزا ہوئی،محکمے نے اسے برطرف کیا۔اپیل میں سزا معطل ہوئی تو ملزم نے عہدے پر بحالی کیلئے اسلام آباد ہائیکورٹ سے رجوع کیا اورعدالت نے عہدے پر بحالی کا حکم دیا۔قانون کے مطابق سزا مکمل ہونےکے بعد مجرم دس سال عوامی عہدے کیلئے نااہل رہتا ہے۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے ریمارکس دیئے کہ سزا معطل ہونے سے جرم ختم نہیں ہوتا،اپیل میں بری ہونے تک سرکاری وعوامی عہدے پر بحالی نہیں ہوسکتی۔

عدالت نےسرکاری اپیل منظورکرتےہوئے سزایافتہ افسر کی ملازمت پربحالی کا فیصلہ کالعدم قرار دے دیا اور یہ بھی قراردیا کہ سزا معطل ہونےکا مطلب یہ نہیں کہ جرم ختم ہوگیا۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube