Monday, August 3, 2020  | 12 Zilhaj, 1441
ہوم   > پاکستان

اسٹاک ایکس چینج پر حملے کا مقدمہ سرکار کی مدعیت میں درج

SAMAA | - Posted: Jun 30, 2020 | Last Updated: 1 month ago
SAMAA |
Posted: Jun 30, 2020 | Last Updated: 1 month ago

کراچی میں اسٹاک ایکسچینج پر حملے کا مقدمہ سی ٹی ڈی تھانے میں سرکار کی مدعیت میں درج کرلیا گیا ہے۔

کراچی اسٹاک ایکسچینج پر حملے کے مقدمے میں انسداد دہشت گردی، ایکسپلوزو ایکٹ، قتل سمیت دیگر دفعات شامل کی گئی ہیں، مقدمہ نامعلوم دہشت گردوں کے خلاف درج کیا گیا ہے۔ دہشتگردی کے واقعے کا مقدمہ ایس ایچ او میٹھا در کی مدعیت میں درج کیا گیا ۔

سیکیورٹی فورسزنے4دہشتگردوں کو8منٹ میں ہلاک کیا،ڈی جی رینجرز

مقدمے میں ملزمان سے ملنے والی سب مشین گنز کے نمبرز درج ہیں۔ جب کہ مقدمہ میں کراچی اسٹاک ایکس چینج سے قبضے لیے گئے 2 موبائل فونز کا بھی اندارج کیا گیا ہے۔

کراچی:اسٹاک ایکس چینج پرحملہ ناکام،4دہشتگرد ہلاک،3 اہلکارشہید

پولیس کے مطابق قبضے میں لیے گئے موبائل فونز میں سے ایک موبائل فون اینڈرائڈ، جب کہ ایک سادہ موبائل فون تھا۔ آیف آئی آر میں دہشت گردوں سے برآمد ہونے والے سامان کی فہرست بھی شامل کی گئی ہے۔ مقدمے میں گاڑی کا ذکر بھی شامل ہے۔

واضح رہے کہ 29 جون کی صبح 10 بج کر 2 منٹ پر کراچی کے مصروف ترین علاقے آئی آئی چندریگر روڈ پر واقع اسٹاک ایکسچینج پر دہشت گرد حملے میں 4 دہشت گردوں کو مقابلے میں ہلاک کیا گیا تھا، جب کہ حملے میں ایک پولیس افسر اور 3 سیکیورٹی گارڈ شہید اور 2 سیکیورٹی گارڈز سمیت 6 افراد زخمی ہوئے۔

سیکیورٹی فورسز نے بروقت کارروائی کے دوران 4 دہشت گردوں کو صرف 8 منٹ میں ہی ہلاک کرکے حملہ ناکام بنا دیا تھا۔ حملے کی ذمہ داری کالعدم بلوچ لبریشن آرمی کی جانب سے سوشل میڈیا پر قبول کی گئی۔

دوسری جانب وزیراعلیٰ سندھ نے دہشت گردوں کا مقابلہ کرنے والے اہل کاروں سے ملاقات کر کے ان کی حوصلہ افزائی کرینگے۔ آر آر ایف کے جوانوں نے دہشت گردوں کا حملہ روکنے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔

پاکستان سٹاک ایکسچینج پر حملے سے متعلق بم ڈسپوزل سکواڈ نے اپنی رپورٹ تیار کرلی ہے۔ جائے وقوعہ سے 39 رائفل گرنیڈ برآمد ہوئے، دہشت گرد ایک آٹومیٹک لانچر بھی ساتھ لائے۔ ملزمان سے ملنے والے 15 روسی ساختہ دستی بم بھی ناکارہ کر دیئے گئے۔ مارے گئے دہشت گردوں سے 10 گرنیڈ بھی برآمد ہوئے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube