Saturday, October 24, 2020  | 6 Rabiulawal, 1442
ہوم   > پاکستان

سابق امیرجماعتِ اسلامی سیدمنورحسن کراچی میں سپردخاک

SAMAA | - Posted: Jun 27, 2020 | Last Updated: 4 months ago
SAMAA |
Posted: Jun 27, 2020 | Last Updated: 4 months ago

سابق امیر جماعت اسلامی سید منورحسن کو سخی حسن قبرستان کراچی میں سپرد خاک کردیا گیا۔

ہفتے کی نماز ظہر کے بعد نمازجنازہ میں سیاسی اورمذہبی رہنماؤں کے علاوہ بڑی تعداد ميں لوگوں نے شرکت کی۔سینیٹرسراج الحق نے ناظم آباد کےعیدگاہ گراؤنڈ میں نماز جنازہ پڑھائی۔

دعاکے بعد مختصر خطاب ميں سراج الحق نےعزم کيا کہ منورحسن کا حق اورسچ کا مشن اور باطل کی مخالفت جاری رہےگی۔

انيس سواکتاليس میں منورحسن دلی کے معزز گھرانے میں پیدا ہے۔کراچی کے جیکب لائن کےایک اسکول سےابتدائی تعلیم حاصل کرنيوالےمنورحسن نے1963ءاور1966ءمیں جامعہ کراچی سےعمرانیات اوراسلامیات میں”ایم اے” کيا، نیشنل اسٹوڈنٹس فیڈریشن کے پلیٹ فارم سےطلباءسیاست کاآغازکیا اور پھراسلامی جمعیت طلباکےہراول دستے

ميں شامل ہوگئے۔ برجستگی اورشستہ تقریرمیں اُن کاکوئی مدمقابل نہ تھا۔کالج میگزین کےایڈیٹراوربیڈمنٹن کےاچھےکھلاڑی بھی رہے۔ 27 دسمبر1964ء

کےسالانہ اجتماع میں انہیں اسلامی جمعیت طلباکاناظم اعلیٰ منتخب کیا۔ 1968ءمیں”جماعت اسلامی پاکستان” میں شمولیت اختیارکی۔ کراچی کےڈپٹی سیکرٹری جنرل اورنائب امیررہے، مرکزی مجلس شوریٰ اورمجلس عاملہ کےبھی رکن منتخب ہوئے۔

1977کےعام انتخابات میں پیپلزپارٹی کےاُميدوارجمیل الدین عالی کامقابلہ کیا اورقومی اسمبلی کےرکن منتخب ہوئے، ملک بھرمیں سب سےزیادہ ووٹ لینےکااعزازبھی اُنہی کوحاصل ہوا، 1977میں تحریک نظام مصطفی کوکراچی میں منظم کیا۔ اسلامک ریسرچ اکیڈمی کراچی کےڈائریکٹربھی رہے،ان کی نگرانی میں اس اکیڈمی نے 70سے زيادہ علمی کتابیں شائع کیں۔1989 سےاکيانوے تک کراچي کےاميررہے،سن 1992ميں جماعت اسلامی پاکستان کےڈپٹی سیکرٹری جنرل بناديےگئے، سید منورحسن 2009 میں بھاری اکثریت سے جماعت اسلامی کےچوتھےامیرمقررہوئےاور2014 تک اِس منصب پرفائزرہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube