Friday, July 3, 2020  | 11 ZUL-QAADAH, 1441
ہوم   > پاکستان

بیس کروڑکی پیشکش بھی اکلوتے بیٹے کی جان نہ بچاسکی

SAMAA | - Posted: May 16, 2020 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: May 16, 2020 | Last Updated: 2 months ago

خیبرپختونخوا کے ضلع سوات میں ایک نوجوان کو قیمتی گاڑی کیلئے قتل کردیا گیا ہے۔ اکلوتے بیٹے کیلئے ماں نے 20 کروڑ کی پیشکش کی مگر دیر ہوچکی تھی۔ پولیس نے ملزم کو گرفتار کرلیا ہے۔

پولیس کے مطابق 13 مئی کو تحصیل کبل کے علاقہ منجا توتانو بانڈہ کے رہائشی ملزم حیدر علی ولد شاکر اللہ نے ننگولئی کے رہائشی ایاز احمد ولد نثار احمد کو سیر کے بہانے گھر سے بلایا. دونوں ایاز احمد کی گاڑی میں پہلے ضلع دیر لوئر کے علاقہ خال گئے۔ بعد ازاں لواری ٹنل اور وہاں سے سوات اور دیرلوئر کے سرحدی علاقے منجائی کنڈو طورمنگ درہ گئے جہاں ملزم حیدر علی نے پستول سے فائرنگ کرکے آیاز احمد کو قتل کردیا اور ان سے قیمتی گاڑی TZ چھین لی۔

مقتول کی گاڑی کا عکس

اطلاع ملنے پر تھانہ خال پولیس نے لاش اسپتال منتقل کرکے ملزم کی گرفتاری کیلئے ضلع بھر میں ناکہ بندی کردی اور چند گھنٹوں بعد ملزم حیدرعلی کو تھانہ خال کی حدود سے آلہ قتل سمیت گرفتار کر لیا گیا۔ بعدازاں ملزم کی نشاندہی پر مقتول کی قیمتی گاڑی بھی باجوڑ سے برآمد کر لی گئی۔

پولیس نے کا کہنا ہے کہ جب مقتول کی ماں نے پولیس کے اعلیٰ حکام سے فون پر بات کی تو انہوں نے پولیس کو بتایا کہ اپنے بیٹے کو صحیح سلامت حوالے کرنے پر ملزم کو بیس کروڑ روپے اور اعلیٰ قیمتی گاڑی دینے کو تیار ہوں لیکن ماں کی اس پیشکش سے پہلے ملزم ان کے بیٹے کو قتل کر چکا تھا۔

ابتدائی تفتیش میں ملزم نے پولیس کو بتایا کہ وہ بہت زیادہ مقروض ہے اور اس نے یہ سب کچھ قیمتی گاڑی چھیننے کیلئے کیا تاکہ گاڑی فروخت کرکے قرض سے نجات حاصل کر سکے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube