Thursday, October 1, 2020  | 12 Safar, 1442
ہوم   > پاکستان

ٹائیگر فورس کو آج سے مکمل آپریشنل کردیا جائیگا

SAMAA | - Posted: Apr 29, 2020 | Last Updated: 5 months ago
SAMAA |
Posted: Apr 29, 2020 | Last Updated: 5 months ago

وزیراعظم عمران خان کی ہدایت پر بننے والی ٹائیگر فورس کو آج 29 اپریل سے مکمل آپریشنل کردیا جائے گا۔

وزیراعظم عمران خان کی ہدایت پر قائم ٹائیگر فورس ایکشن میں آگئی ہے۔ ٹائیگر فورس کا ٹیسٹ رن مکمل کرلیا گیا ہے، جس کے بعد اسے آپریشنل کردیا جائے گا۔ وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار فورس کا باضابطہ افتتاح کریں گے۔ ابتدائی طور پر سیالکوٹ میں نوجوانوں کو ذمہ داریاں سونپی گئیں ہیں، جہاں نوجوانوں کو مساجد اور یوٹیلیٹی اسٹورز کے باہر تعینات کیا گیا ہے۔ رضا کاروں پر مشتمل فورس کو ضلعی انتظامیہ اور مقامی پولیس کا تعاون بھی حاصل رہے گا۔

معاون خصوصی برائے امور نوجوانان عثمان ڈار کا کہنا ہے کہ ٹائیگر فورس کی سافٹ لانچنگ کا تجربہ کامیاب رہا ہے۔ اس دوران عوام کا تعاون اور رد عمل قابل ستائش ہے۔ نوجوانوں نے قومی جذبے کے تحت محنت اور لگن سے ذمہ داری پوری کی ہیں۔

ٹائیگر فورس سے متعلق انہوں نے بتایا کہ جمعرات 30 اپریل کو سیالکوٹ سے ٹائیگر فورس کو باضابطہ آپریشنل کر رہے ہیں۔ اس موقع پر وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار ٹائیگر فورس کا با ضابطہ آغاز کریں گے۔ جس کے بعد مرحلہ وار ملک بھر کے نوجوانوں کو مکمل طور پر متحرک کر دیں گے۔ سیالکوٹ سے 20 ہزار سے زائد نوجوان ٹائیگر فورس کا حصہ بنے ہیں، جس میں طالب علم، سوشل ورکرز، اساتذہ، انجینیرز اور ڈاکرز فورس میں شامل ہے، جب کہ صحافی، قانون دان، میڈیکل ورکرز اور این جی اوز سے وابسطہ افراد نے بھی اس میں رجسٹریشن کروائی ہے۔

معاون خصوصی نے مزید بتایا کہ مساجد اور یوٹیلیٹی اسٹورز میں سوشل ڈسٹنسنگ اور حکومتی گائیڈ لائنز کو یقینی بنایا جا رہا ہے، یوٹیلیٹی اسٹورز میں مطلوبہ سامان میسر نہ ہونے پر ضلعی انتظامیہ کو شکایت کی جا سکے گی۔

واضح رہے کہ وزیرِ اعظم عمران خان نے کرونا وائرس کے باعث لاک ڈاؤن سے پریشان حال غریبوں کو گھر پر کھانا پہنچانے اور اس وائرس کی روک تھام کے لیے کام کرنے والے رضاکاروں پر مشتمل کورونا ریلیف ٹائیگر فورس تشکیل دینے کا اعلان کیا تھا۔

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ ٹائیگر فورس میں رجسٹرڈ نوجوانوں کی تعداد 7 لاکھ 39 ہزار سے تجاوز کر گئی ہے۔ جہاں پنجاب سے رجسٹرڈ نوجوانوں کی تعداد 4 لاکھ 94 ہزار سے زائد، سندھ سے 1 لاکھ 11 ہزار، پختونخوا سے 1 لاکھ 2 ہزار سے زائد نوجوان، اسلام آباد سے 10 ہزار، بلوچستان سے 9 ہزار، آزاد کشمیر سے 8 ہزار سے زائد نوجوان فورس کا حصہ بنے ہیں۔

کرونا ٹائیگر فورس کو ہینڈل کرنے کے لیے ضلع، تحصیل اور یوسی سطح پر کمیٹی بنے گی۔ 10 رکنی کمیٹی کی سربراہی ضلع کی سطح پر ڈپٹی کمشنر، تحصیل میں اسسٹنٹ کمشنر اور یو سی میں سیکریٹری یونین کونسل کرے گا، ٹائیگر فورس کرونا متاثرین کو کھانا پہنچانے اور قرنطینہ مراکز کی انتظامیہ کو اسسٹ کرنے کے فرائض سرانجام دے گی۔ ٹائیگر فورس کی ذمہ داریوں میں اسپتالوں اور عوامی مقامات پر آگاہی پھیلانا بھی شامل ہے۔ کرونا سے وفات پانے والے شہریوں کی آخری رسومات میں کرونا ٹائیگر فورس مدد فراہم کرے گی۔ ٹائیگر فورس بے روزگار، مزدوروں اور مستحق افراد کی نشاندہی بھی کرے گی۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube