ہوم   > پاکستان

بلوچستان میں کرونا کا پہلاکیس،حفاظتی انتظامات مزید سخت

SAMAA | - Posted: Mar 11, 2020 | Last Updated: 3 months ago
Posted: Mar 11, 2020 | Last Updated: 3 months ago

شہری محتاط

بلوچستان میں کرونا کا پہلا کیس سامنے آنے کے بعد حفاظتی انتظامات مزید سخت کردئیےگئے ہیں۔ پاکستان سے ملحقہ ایران اور افغانستان کی سرحدین بدستور بند ہیں، ڈی جی ہیلتھ بلوچستان کہتے ہیں کہ اب تک مختف ذرائع سے آنے والے 65 ہزار سے زائد افراد کی اسکریننگ کی جا چکی ہے۔

بلوچستان میں کرونا وائرس کا پہلا کیس گزشتہ روز رپورٹ ہوا،  سندھ کے علاقے دادو کا رہائشی 12سالہ علی رضا فاطمہ جناح اسپتال کے آئسولیشن وارڈ میں زیرعلاج ہے۔ اسپتال انتظامیہ کہنا ہے کہ علی رضا 29 فروری کو ایران سے پاکستان پہنچا تھا ، پہلے کیس کے بعد حفاظتی انتظامات مزید سخت کردیئے گئے ہیں۔پاک ایران بارڈر 17ویں جبکہ پاک افغان بارڈر چمن 10 ویں روز بھی بند ہے۔

متعلقہ حکام کے مطابق ایران سے اب تک 5 ہزار سے زائد زائرین طلباء اور تفتان پہنچ چکے ہیں۔ 3600 سے زائد زائرین کو قرنطینہ سینٹرتفتان میں رکھا گیا ہے جبکہ 65 زائرین قرنطینہ سیںٹر میاں غنڈی میں موجود ہیں۔ ڈی جی ہیلتھ بلوچستان کہتے ہیں کہ مختلف ذرائع سے بلوچستان آنے والے اب تک 65 ہزار افراد کی اسکریننگ کی گئی ہے۔

ڈی جی ہیلتھ کا مزید کہنا تھا کہ کرونا وائرس سے نمٹنے کے لئے محکمہ صحت کے ایک ہزار اہلکاروں کو تربیت دی ہے۔ وزیراعلیٰ بلوچستان نے کرونا وائرس کے خلاف اقدامات کا ازسرنو جائزہ لینے لئے اجلاس بھی طلب کرلیا ہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube