ہوم   > پاکستان

انکم سپورٹ پروگرام سے نام خارج، قندیل کےوالدین فاقوں پرمجبور

SAMAA | - Posted: Jan 12, 2020 | Last Updated: 1 month ago
SAMAA |
Posted: Jan 12, 2020 | Last Updated: 1 month ago

بیٹے امداد نہیں کرتے

وفاقی حکومت نے مقتولہ قندیل بلوچ کے والدین کو مشکل میں ڈال دیا۔ گھر کا خرچ چلانے والی بیٹی کے قتل بعد بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام سے امداد بھی بند ہوگئی۔

قندیل بلوچ کی زندگی میں والدین کی کفالت ان کی ذمہ داری تھی۔ قندیل کے لرزہ خیز قتل کے بعد والدین بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام سے ملنے والی معمولی رقم سے نظام زندگی چلاتے رہے مگر اب یہ سہارا بھی ختم ہوگیا ہے جس کے باعث نوبت فاقوں تک پہنچ گئی ہے۔

بوڑھے والدین کے پاس ڈیرہ غازی خان کے گاؤں میں دو کمروں کے گھر اور دو چارپائیوں کے سوا کچھ نہیں ہے۔ قندیل کے والد بینائی سے محروم اور ادویات بھی حکومتی امداد سے خریدتے تھے۔

ان کا کہنا ہے کہ ایک بیٹا بیرون ملک مقیم ہے مگروہ بھی ان کی کوئی مددنہیں کرتا۔ والدہ نے حکومت سے امداد بحال کرنے کی اپیل ہے۔

سماجی کارکن نگہت داد نے کہا ہے کہ حکومت کو فیصلے پرنظرثانی کرنی چاہیے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube