Tuesday, October 27, 2020  | 9 Rabiulawal, 1442
ہوم   > پاکستان

شہزاداکبر کا ملک ریاض کیس کی تفصیلات بتانے سے گریز

SAMAA | - Posted: Dec 5, 2019 | Last Updated: 11 months ago
SAMAA |
Posted: Dec 5, 2019 | Last Updated: 11 months ago

وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے احتساب شہزاد اکبر نے کہا ہے کہ یہ سوال اہم نہیں ہے کہ پیسہ باہر کیسے گیا بلکہ اہمیت اس بات کی ہے کہ ہم نے اپنا پیسہ واپس وصول کرلیا ہے۔

جمعرات کو اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے شہزاد اکبر نے برطانیہ کی نیشنل کرائم ایجنسی اور بحریہ ٹاؤن کے مالک ملک ریاض کے درمیان ہونے والے ’تصفیہ‘ کے نتیجے میں پاکستان کو موصول ہونے والی رقم کی تفصیلات بتائیں۔

شہزاد اکبر نے اس بات پر زور دیا کہ جب ہمیں پیسہ واپس مل جاتا ہے تو پھر اس سوال کی کوئی اہمیت نہیں رہ جاتی کہ یہ پیسہ پاکستان سے باہر کیسے گیا۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ پاکستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ قوم کا پیسہ بیرون ملک سے واپس لایا گیا ہے اور ہم اس پر برطانوی حکومت کے مشکور ہیں۔

شہزاد اکبر نے ملک ریاض اور این سی اے کے درمیان ہونے والے ’تصفیہ‘ کی تفصیلات سے قوم کو آگاہ کرنے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ برطانوی قانون کے مطابق جس کیس میں کورٹ سے باہر معاملات طے ہوجائیں، اس کی تفصیلات منظر عام پر نہیں لائی جاسکتی۔

گزشتہ دنوں این سی اے نے کہا تھا کہ ملک ریاض اور ان کے خاندان سے تصفیہ کے نتیجے میں مجموعی طور پر 19 کروڑ پاؤنڈ یا 38 ارب روپے حاصل کیے ہیں اور یہ رقم ریاست پاکستان کو لوٹا دی جائے گی۔

ملک ریاض نے ٹوئٹر پر اس بارے میں بیان دیتے ہوئے کہا تھا کہ کچھ ’عادی ناقدین‘ نیشنل کرائم ایجنسی کی پریس ریلیز کو توڑ مروڑ کر پیش کرکے میری کردار کشی کر رہے ہیں۔

پراپرٹی ٹائیکون نے کہا تھا کہ میں نے پاکستان کی سپریم کورٹ کو کراچی بحریہ ٹاؤن مقدمے میں 19 کروڑ پاؤنڈ کے مساوی رقم دینے کے لیے برطانیہ میں قانونی طور پر حاصل کی گئی ظاہر شدہ جائیداد فروخت کردی ہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube