ہوم   >  پاکستان

کابینہ کمیٹی کوشرائط رکھنے کا حق حاصل نہیں، پرویز رشید

4 weeks ago

میاں صاحب کو باہر بھیجنے میں تاخیر نہیں ہونی چاہئے

ليگی رہنماء پرويز رشيد کہتے ہيں میاں صاحب کے باہر جانے میں ایک منٹ کی تاخیر نہیں ہونی چاہئے، وزير قانون نے ماورائے آئين اپنی عدالت لگالی ہے، کابينہ کی ذیلی کميٹی کو ایسی شرائط رکھنے کا کوئی حق حاصل نہیں، کوئی قانون، کوئی ضابطہ، کوئی اصول ان کو اس بات کی اجازت نہیں دیتا۔

کابینہ کی ذیلی کمیٹی نے سابق وزیراعظم نواز شریف کو علاج کیلئے بیرون ملک جانے کی مشروط اجازت دینے کا فیصلہ کرلیا، جس کے تحت مسلم لیگ ن کے سربراہ پر 4 ہفتوں میں واپس آنے اور مقدمات کا سامنا کرنے کی شرط رکھی گئی ہے۔

مسلم لیگ ن کے سینئر رہنماء پرویز رشید نے مشروط اجازت پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ میاں صاحب کے باہر جانے میں ایک منٹ کی تاخیر نہیں ہونی چاہئے، وزیر قانون کی لاقانونیت سامنے آنا شروع ہوگئی، پہلے سنتے تھے کہ ماورائے قانون قتل ہوتے ہیں، اب ماورائے آئین اور ماورائے قانون عدالتیں بھی بننی شروع ہوگئی ہیں۔

مزید جانیے : نوازشریف کو بیرون ملک جانے کی مشروط اجازت دینے کافیصلہ

ان کا کہنا ہے کہ پاکستان کے آئین میں سیشن کورٹ، ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ ہیں، ذیلی کابینہ کمیٹی نام کی کوئی عدالت وجود نہیں رکھتی، اس کا فیصلہ ماورائے آئین، ماورائے قانون اور ماورائے عدالت ہے، جس کو کوئی بھی قانون پر عمل کرنے والا تسلیم نہیں کرے گا۔

انہوں نے وفاقی وزیر پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ فروغ نسيم ماورائے آئین عدالت کے جج بن بیٹھے ہیں، جو عدالتی زبان بھی بول رہے ہیں، کابينہ کی ذیلی کميٹی کو شرائط رکھنے کا کوئی حق حاصل نہیں، کوئی قانون، کوئی ضابطہ اُن کو اس بات کی اجازت نہیں دیتا۔

دوسری جانب مسلم لیگ کا کہنا ہے کہ چار ہفتوں میں صحتیاب ہونے کی کوئی کیسے گارنٹی دے سکتا ہے، کابینہ کی ذیلی کمیٹی کے فیصلے سے مطمئن نہیں، یہ فیصلہ سمجھ سے بالاتر ہے، ہم اپنے مؤقف پر فی الحال قائم ہیں، شہباز شریف، نواز شریف سے حتمی مشاورت کررہے ہیں، جلد اپنا نکتہ نظر میڈیا کے سامنے لائیں گے۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں
 
 
 
 
 
 
 
PERVEZ RASHID, PMLN, NAWAZ SHARIF, CORRUPTION, NAB, IMRAN KHAN, PTI, ECL, SHEHBAZ SHARIF, PERVAIZ RASHID,