ہوم   >  پاکستان

پرنسپل نے آئی فون مانگا، طالب علم ڈکیتی میں ماراگیا

1 week ago

مقتول کا ساتھی گرفتار

خیبر پختونخوا کے وسطی ضلع مردان میں اسکول کے طالبعلم کے قتل کا ڈراپ سین ہوگیا۔ مقتول اسامہ اور ان کا ساتھی سکول میں چوری کی نیت سے داخل ہوئے تھے۔ طلبہ نے چوری کی واردات امتحانی پرچے پاس کرانے لئے پرنسپل کی آئی فون موبائل کی فرمائش پوری کرنے کے لئے کی تھی۔

مردان کے علاقہ شیح ملتون ٹاون میں 29 اکتوبر کو درمیانی شب مردان ماڈل اسکول میں دو چور گھس گئے تھے جس میں ایک فائرنگ سے ہلاک اور دوسرا فرار ہوگیا تھا۔

واقعے میں جاں بحق نوجوان کی شناخت بعد میں اسامہ کے نام سے ہوئی جو  سر سید احمد خان رسالپور کالج  کے فسٹ ائیر کا طالبعلم تھا اور اپنے ساتھی شیرداد کے ہمراہ اسکول میں چوری کی عرض سے آیا تھا۔

مقتول اسامہ کے فرار ساتھی کو پولیس نے گر فتار کرلیا ہے۔ دونوں واردات کی رات اسکول میں داخل ہوئے تو چوکیدار کو  شبہ گزرا اور اس نے فائرنگ کی اور ان دونوں نے بھی جوابی فائر نگ کی۔ اس دوران اسامہ اپنے ساتھی کی فائرنگ سے جاں بحق ہوگیا اور اس کا ساتھی فرار ہونے میں کامیاب ہوگیا۔

ملزم شیرداد نے تفتیش کے دوران بتایا کہ مقتول اسامہ 2018 میں مردان ماڈل سکول سے میٹرک کر کے فارغ ہو گیا تھا اور وہ دونوں ایک پرائیویٹ ہاسٹل میں رہائش پزیر تھے۔ واردات کے لئے انہوں نے رینٹ پر گاڑی حاصل کی اور دونوں رات کو مذکورہ اسکول میں داخل ہوئے۔

ملزم نے بتایا کہ اسکول کے پرنسپل نے امتحان میں پاس کروانے کیلئے اسامہ سے آئی فون کی ڈیمانڈ کی تھی مگر اس کے پاس پیسے نہیں تھے جس کے باعث چوری کا منصوبہ بنایا۔

واقعہ سے متعلق مردان پولیس کی پریس ریلیز

مردان (ڈسٹرکٹ پولیس، آئی پی آر) 29اکتوبر 2019کو شیخ ملتون کے سیکٹر F میں واقع مردان ماڈل اسکول میں درمیانی شب دو چور گھس گئے تھے جس میں ایک فائرنگ سے لگ جاں بحق ہواتھا۔ ڈی پی او سجاد خان نے واقعے کا سخت نوٹس لیتے ہوئے ملزم / ملزمان کی گرفتاری کے لئے ایس پی آپریشن مشتاق احمدخان کی نگرانی میں خصوصی ٹیم تشکیل دی تھی جس میں ڈی ایس پی شیخ ملتون سرکل طیب جان، ایس ایچ او شیخ ملتون خائستہ خان اور تفتیشی افسر شامل تھے۔

واقعے کا مقدمہ شیخ ملتون پولیس نے اسکول کے چوکیدار روح الامین ولد فضل محمد کی مدعیت میں دفعہ 302,324,457,449,34کے تحت درج کیاگیا۔ تفتیشی ٹیم نے جدید سائنسی بنیادوں پر اندھے قتل کیس کے سر اغ کے لئے دن رات محنت کی اور مختلف زاویوں سے تحقیقات کرتے ہوئے ملزم تک رسائی حاصل کرلی۔

ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر سجادخان کی خفیہ اطلاعات پر گزشتہ روز پو لیس کی چھاپہ مار پارٹی نے علاقہ غلہ ڈھیر میں چھاپہ مارکر ملزم شیرداد ولد نوردادساکن غلہ ڈھیر کو گرفتارکرلیا جس نے پولیس کے سامنے اعتراف جرم کرتے ہوئے بتایا کہ مقتول اسامہ ولد عواث ساکن جمال گڑھی  2018میں مردان ماڈل اسکول سے میٹرک پاس کرکے فار غ ہواتھا۔ اسامہ فرسٹ ائیر کا طالب علم تھا اورایک پرائیوٹ ہاسٹل میں رہائش پذیر تھا۔ وقوعہ کے روز اسی ہاسٹل میں پلان تیار کرکے رینٹ اے کار گاڑی لی اور دونوں مذکورہ اسکول میں چوری کی نیت سے داخل ہوگئے۔

ملزم نے انٹاروگیشن کے دوران پولیس کو بتایا کہ مقتول سے فسٹ ائیر امتحان پاس کرنے کے بدلے پرنسپل نے آئی فون کا ڈیمانڈ کیا تھا جس کے لئے مقتول اور ملزم نے مل کر چوری کا پلان تیار کیا۔ اسکول میں داخل ہونے کے بعد چوکیدار نے فائرنگ کی تو چوروں نے بھی جوابی فائرنگ کی جس کے دوران اسامہ اپنے ہی ساتھی کی گولی سے موقع پر جاں بحق ہوگیا۔ واردات کے بعد ملزم فرارہوگیا تھا۔

ملزم سے واردات میں استعمال ہونے والا آلہ قتل، گاڑی، دستانے، رسی، پستول اور شوز بھی برآمد کرلئے گئے ہیں۔ تعلیمی ادارے میں ہونے والی واردات سے علاقے اور والدین میں خوف وہراس پھیل گیا تھا اور یہ کیس پولیس کے لئے چیلنج تھا تاہم پولیس نے دن رات محنت کرکے ایک ہفتہ کے اندراندر اس اندھے قتل کیس کا سراغ لگایا اور اصل ملزم تک رسائی حاصل کرکے گرفتار کر لیا۔ پولیس عوام کے جان ومال کی تحفظ کے لئے اپنے فرائض بہ احسن طریقے سے سرانجام دیتے رہیں گی۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں