Wednesday, December 8, 2021  | 3 Jamadilawal, 1443

مولانا فضل الرحمان کا آزادی مارچ اسلام آباد میں داخل

SAMAA | , , and - Posted: Oct 31, 2019 | Last Updated: 2 years ago
Posted: Oct 31, 2019 | Last Updated: 2 years ago

جمعرات کی شام تک اسلام آباد پہنچنے کا امکان

مولانا فضل الرحمان کا آزادی مارچ اسلام آباد میں داخل ہوگیا، جو مرکزی جلسہ گاہ ایچ 9 گراؤنڈ کی جانب گامزن ہے، جمعیت علمائے اسلام (ف) کا مرکزی قافلہ  جلسہ گاہ پہنچنے میں ابھی مزید وقت لگے گا۔

جمعیت علمائے اسلام ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے روات میں آزادی مارچ کے استقبالیہ کیمپ میں جمع کارکنوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آپ کی یکجہتی قومی نعرے کا روپ دھار چکی ہے، عوام پیغام دے رہے ہیں کہہ نااہل اور ناجائز حکومت قابل قبول نہیں۔

مولانا فضل الرحمان نے حکومت کیخلاف 27 اکتوبر کو کراچی سے آزادی مارچ کا آغاز کیا تھا، جو حیدر آباد سے ہوتا ہوا سکھر پہنچا تھا جبکہ دوسرے دن کا پڑاؤ ملتان میں اور تیسرے دن لاہور میں قیام کیا تھا جس کے بعد چوتھے کا سفر جمعرات کی علی الصبح گوجر خان میں ختم ہوا تھا۔

مزید جانیے : کھنہ پل سے گر کر مارچ کے 2 شرکا جاں بحق، 4زخمی

پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ آزادی مارچ کے جلسہ گاہ ایچ 9 کے قریب سے 2 مسلح افراد کو اسلحہ سمیت گرفتار کرلیا۔

یہ بھی پڑھیں : آزادی مارچ، پنڈال کے قریب سے 2 مسلح افراد گرفتار

مولانا فضل الرحمان کا قافلہ کھنہ پل سے گزر رہا تھا کہ اس دوران استقبال کیلئے آنے والے 6 افراد گر گئے، 2 افراد جاں بحق اور 4 شدید زخمی ہوئے جنہیں اسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔

آزادی مارچ جلسے کی تیاریاں، قافلوں کی آمد، تصویری جھلکیاں

آزادی مارچ کےشرکاء جمعرات کو تقریباً 9 گھنٹے گوجر خان میں قیام کے بعد اسلام آباد کے سفر پر روان ہوئے تھے، جے یو آئی ف کے امیرمولانا فضل الرحمن نے گوجرخان میں سابق چیئرمین بلدیہ شاہد صراف کے گھر قیام کیا،اگلی منزل کی جانب بڑھنے سے قبل مولانا فضل الرحمن نے خطاب میں کہا کہ مارچ میں جلسہ اور دھرنا بھی ہے۔ جمعیت علمائےاسلام کے آزادی مارچ کی راولپنڈی آمد سے قبل ہی شہر میں موبائل ڈیٹا سروسز معطل ہے،موبائل ڈیٹا سروسز صدرسے فیض آباد تک 3 کلومیٹراطراف میں بند کی گئی ہیں۔ ابتدائی طور پر یہ ڈیٹا سروسز رات 9 بجے تک بند رکھی جائیں گی۔

مزید جانیے : اسلام آباد میں جمعہ کو بھی نجی اسکول بند رکھنے کافیصلہ

جمعرات کی دوپہر گوجر خان میں شرکاء سے خطاب میں مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ آپ نے ہم کو فالو کرنا ہے،ہم کو الگ نہیں ہونا،اپنی قوت یکجا کرنی ہے،یہ مارچ ہے جس میں جلسہ اور دھرنا بھی ہے،صبح اسلام آباد میں داخل ہونگے،اپنے مقاصد کے لیے بھرپور احتجاج لے کر جارہے ہیں۔

مقاصد کیلئےبھرپوراحتجاج لےکرجارہے ہیں،فضل الرحمان

انھوں نے مزید کہا کہ ہم پرامن اورپر سکون رہنے ہوئے آگے بڑھیں گے لیکن اپنے مقاصد حاصل کریں گے۔ مولانا فضل الرحمان نے ٹرین حادثے پر افسوس کا اظہار کیا اور واقعے کی تحقیقات کا مطالبہ کیا۔مولانا فضل الرحمان کے خطاب کے بعد کنٹینر سے اعلان کیا گیا کہ مولانا فضل الرحمان مارچ کی قیادت کرتے ہوئے آگے ہونگے اور باقی گاڑیاں ان کے پیچھے ہونگی،کسی خاتون صحافی سے کوئی بدتمیزی نہیں کرے گا۔

مزید جانیے : مرکزی جلسہ کل نماز جمعہ کے بعد ہوگا، اکرم درانی 

سیکیورٹی ذرائع کے مطابق مولانا فضل الرحمان کے قافلے میں تقریباً 1300 سے زائد گاڑیاں اور 25 ہزار سے زائد افراد سفر کررہے ہیں

جمعیت علمائے اسلام ف کے آزادی مارچ کے جلسے سے متعلق اپوزیشن جماعتوں میں اختلاف کھل کر سامنے آگئے، مسلم لیگ ن اور جے یو آئی نے جمعہ کو جلسہ کرنے کا اعلان کردیا جبکہ پیپلزپارٹی اور اے این پی اس فیصلے سے لاعلمی کا اظہار کررہی ہیں، پی پی رہنماء مصطفیٰ نواز کھوکھر کا کہنا ہے کہ بلاول بھٹو زرداری نے 31 اکتوبر کا دن جلسے میں شرکت کیلئے مختص کیا تھا، رحیم یارخان میں کل پیپلزپارٹی کا جلسہ شیڈول کے مطابق ہوگا۔

ویڈیو: بحریہ ٹاؤن اسلام آباد میں آزادی مارچ کا استقبال

دوسری جانب عوامی نیشنل پارٹی کا خیبرپختونخوا سے آنے والا قافلہ اسلام آباد کے ایچ نائن میں جلسے کے مقام پر پہنچ گیا، جہاں اسفند یار ولی اور میاں افتخار حسین نے مجمع سے خطاب بھی کردیا۔

عوامی نیشنل پارٹی کے سربراہ اسفند یار ولی خان نے اسلام آباد میں جلسے کے مقام پر پہنچنے کے بعد گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کوئی پہنچے نہ پہنچے ہم پہنچ گئے، جلسہ کا ذہن لے کر آیا ہوں، جلسہ تبدیل کرنے کے رہبر کمیٹی کے فیصلے سے آگاہ نہیں کیا گیا۔

اس سے قبل،جمعرات کی صبح آزادی مارچ کے شرکاء لاہور سے طویل سفر کرتے ہوئے گوجر خان پہنچے۔ اس دوران آزادی مارچ نے کئی مقامات پر تھوڑی دیر قیام بھی کیا۔لاہور سے گوجرانوالہ کا تقریباً 60 کلومیٹر کا فاصلہ آزادی مارچ نے 12 گھنٹے میں طے کیا۔ آزادی مارچ کے شرکاء وزیرآباد، گھگرمنڈی،لالہ موسیٰ اور کھاریاں میں بھی رکے۔

تصاویر:اسلام آباد میں آزادی مارچ سےقبل سیکورٹی ہائی الرٹ

مولانا فضل الرحمن نےلاری اڈہ گوجرانوالہ میں اپنے خطاب میں کہا کہ پاکستان میں آنے والے وقت میں کسی کو ہمت نہیں ہوسکے گی کہ وہ ناموس رسالت کو چھیڑے،25 جولائی کوعوام کےمینڈیٹ پرڈاکہ ڈالا گیا،اب تمام سیاسی جماعتیں ایک صف پرکھڑی ہوگئی ہیں،ہم آئین کی بالادستی کی جنگ لڑرہے ہیں اورآج معیشت کی کشتی ہچکولے کھا رہی ہے۔

اسلام آباد:آزادی مارچ کا پنڈال تیار

مولانا فضل الرحمن کےآزادی مارچ کا قمرزمان کائرہ نےلالہ موسیٰ میں استقبال کیا۔اس دوران مولانا فضل الرحمان نے مختلف سیاسی رہنماؤں سے ملاقات کی اور اپنے مختصر خطاب میں کہا کہ آزادی مارچ میں ایک قومی مطالبہ سامنے آیا ہے کہ شفاف الیکشن کرایا جائے۔ انھوں نے امید ظاہر کی کہ دیگرسیاسی رہنماء اسلام آباد میں آزادی مارچ میں شریک ہوں گے۔

آزادی مارچ، گوجرخان پہنچنے کے مناظر

جلہم میں آزادی مارچ کا استقبالیہ کیمپ میں مسلم لیگ نواز اور جے یو آئی کے کارکنوں نے استقبال کیا اور آزادی مارچ کےحق میں زبردست نعرے بازی کی اور شرکاء پر پھولوں کی پتیاں نچھاور کی گئیں۔

آزادی مارچ،کھاریاں پہنچنے کے مناظر

پشاور سے اے این پی کا جلوس رشکئی انٹرچینج سے اسفندیارولی خان،میاں افتخارحسین، ایمل ولی اور دیگر قائدین کی قیادت میں اسلام آباد پہنچے گا۔ جے یوآئی ف جنوبی اضلاع کے قافلے پشاور کے بڑے جلوس میں شامل ہونگے۔ پشاور سےجے یوآئی کا بڑا جلوس صوبائی دفترسےبراستہ پشاور موٹروےانٹرچینج سے آرہا ہے جس کی قیادت اکرم خان درانی،مولانا عطاء الرحمان ،مولانا اسعد محمود اور دیگر قائدین کررہے ہیں ۔ پیپلز پارٹی کا جلوس جے یو آئی ف کے ساتھ شامل ہوگا جس کی قیادت ہمایوں خان،ضیاء اللہ آفریدی، نگہت اورکزئی، مصباح الدین اور دیگر قائدین کریں گے

آزادی مارچ،جہلم پہنچنے کے مناظر

مسلم لیگ نواز کا جلوس پشاور موٹر وے انٹرچینج سے روانہ ہوا جس کی قیادت امیرمقام،اختیارولی اور دیگر قائدین کررہے ہیں۔قومی وطن پارٹی کا جلوس بھی چارسدہ انٹرچینج سے روانہ ہوا جس کی قیادت آفتاب احمد خان شیرپاؤ،سکندر شیرپاؤ اور دیگر قائدین کررہے ہیں۔ ملاکنڈ ڈویژن اور ہزارہ ڈویژن کے جلوس موٹر وے رشکئی،صوابی اور برہان حسن ابدال انٹرچینج پرپشاور کے بڑے جلوس میں شامل ہوئے ہیں۔

فضل الرحمان کاحکومت کے خاتمہ اور نئے انتخابات کامطالبہ

میوہ خیل ہاؤس بنوں میں جلوس کے ساتھ روانہ ہونے سے قبل اکرم خان درانی نےمیڈیا سے گفتگو میں کہا کہ لنک روڈ سےجنوبی اضلاع کا قافلہ انٹرچینج رشکئی کے مقام پرشمالی اضلاع کےقافلےکےساتھ مل کراسلام آباد میں داخل ہوگا۔ ان کا کہنا تھا کہ راستے میں رکاوٹیں کھڑی کی گئیں توساتھ بہا لیں گے،اسلام آباد میں انسانوں کا سمندرہوگا جو موجودہ حکومت پر عدم اعتماد کا ثبوت ہے۔

آزادی مارچ:خیبرپختون خوا کے جنوبی اضلاع سے قافلوں کی آمد

گزشتہ روز، جمعیت علماء اسلام کے رہنماء مولاناعبدالغفورحیدری نے بتایا تھا کہ آزادی مارچ کا قافلہ ٹی چوک سے سیدھا ایکسپریس ہائی وے پر آئے گا۔ قافلہ کرال چوک اور فیض آباد سے گزرتا ہوا زیرو پوائنٹ سےکشمیر ہائی وے میں داخل ہوگا۔ آزادی مارچ کا قافلہ کشمیر ہائی وے سے پشاور موڑ جلسہ گاہ میں پہنچے گا۔

ویڈیو: گوجرانوالہ میں آزادی مارچ کے استقبال کیلئے لوگوں کاہجوم

انھوں نے واضح کیا کہ آزادی مارچ کا قافلہ ٹی چوک سے راول پنڈی شہر کی طرف نہیں جائے گا۔ اس کے علاوہ دوسرا قافلہ خیبر پختونخوا سے مولانا عطاء الرحمان کی قیادت میں ترنول سے کشمیر ہائی وے میں داخل ہوگا۔

 
WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
Azadi march,Fazal ur Rahman,Gujar Khan,Islamabad,Rawalpindi,Latest News
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube