Monday, October 19, 2020  | 1 Rabiulawal, 1442
ہوم   > پاکستان

سمندری طوفان: سندھ کےساحلی علاقےمتاثر

SAMAA | - Posted: Oct 29, 2019 | Last Updated: 12 months ago
SAMAA |
Posted: Oct 29, 2019 | Last Updated: 12 months ago

متعدد دیہاتوں میں سمندری پانی داخل ہوگیا

 کیار نامی سمندری طوفان کے اثرات کے باعث سندھ کے ساحلی حصے متاثر ہوئے۔

 کراچی، ٹھٹھہ، سجاول اور بدین کے ساحلی علاقوں میں سمندری طوفان کے اثرات نمایاں ہیں۔ سمندر میں طغیانی کے باعث شاھ بندر، جاتی، گاڑھو، بگھان  اور کیٹی بندر کے متعدد گاؤں متاثر ہوئے اور گھروں میں بھی پانی داخل ہوا۔ خصوصی طور پر وہ رہائشی حصے جو  ساحل سے بہت نزدیک ہیں  زیادہ متاثر ہیں۔

شاہ بندر کے 20 سے زائد گاؤں میں سمندری پانی داخل ہوگیا ہے جس کی وجہ سے رہائشیوں کو مشکلات کا سامنا ہے۔ متعدد کشتیاں بھی سمندر میں موجود ہیں ۔ متاثرہ علاقوں کے مکینوں کا کہنا ہے کہ انتظامیہ نے طوفان کے پیش نظر تاحال کوئی بھی خاطر خواہ اقدامات نہیں کئے اورنہ کوئی ایسے اقدامات نظر آئے کہ ضرورت پیش آنے پر لوگوں کو فوری طور پر محفوظ مقام پر منتقل کیا جا سکے۔

شاہ بندر تحصیل  کی مختلف یونین کونسلز کے گاؤں مجید جت،گھنور جت، عمر جت، بیر ملاح، ناکھو ملاح،احمد جت،مجید جت، حاجی یوسف جت، نور محمد اپلانو،کوڈاریو،آتھرکی موسی سمیت کئی علاقوں میں سمندر کا پانی  گھروں میں داخل ہوگیا۔

کیٹی بندر اور کچھ مزید گاؤں کے حفاظتی بند کچھ جگہوں سے ٹوٹ جانے کے باعث سمندری پانی آبادی میں بہہ آنے کی بھی اطلاعات ہیں۔

سمندری طوفان کے خطرے سے لوگوں میں خوف و ہراس پایا جاتا ہے جبکہ سیکڑوں ماہی گیر کشتیوں سمیت اب بھی سمندر میں موجود ہیں۔

حکومت کی جانب سے ماہی گیروں اور رہائشیوں کوممکنہ خطرات سے بچانے کے حوالے سے بھی کوئی اقدامات سامنے نہیں آئے۔

کراچی کے ڈسٹرکٹ کورنگی میں شامل ساحلی گاؤں ریڑھی، ابراھیم حیدری اور لٹھ بستی میں وہ گھر جو ساحل سے کافی نزیک ہیں سمندری پانی گھس آنے سے متاثر ہوئے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube