Wednesday, December 8, 2021  | 3 Jamadilawal, 1443

آزادی مارچ کا کارواں لاہور پہنچ گیا

SAMAA | - Posted: Oct 30, 2019 | Last Updated: 2 years ago
SAMAA |
Posted: Oct 30, 2019 | Last Updated: 2 years ago

مولانا کا خطاب مینار پاکستان پر دن 11 بجے متوقع

جمعیت علماء اسلام (ف) کے آزادی مارچ کا کارواں منگل اور بدھ کی درمیانی شب لاہور پہنچ گیا۔

آزادی مارچ جمیعت علماء اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کی سربراہی میں اتوار 27 اکتوبر کو کراچی سے ہوا تھا۔ تیسرے دن کے اختتام پر قافلے کے شرکاء رات لاہور میں آرام کرنے کے بدھ کو اپنی منزل اسلام آباد کی جانب روانہ ہوجائیں گے۔ مارچ کے پہلے دن کے اختتام پر قافلہ سکھر اور دوسرا روزختم ہونے پر ملتان میں ٹھہرا تھا۔

لاہور میں ٹھوکر نیاز بیگ پہنچنے پر مولانا فضل الرحمان کا شاندار استقبال کیا گیا۔ مسلم لیگ نواز اور پاکستان پیپلز پارٹی نے بھی مولانا فضل الرحمان کےاستقبال کے لئے وہاں کیمپس لگائے تھے۔مولانا نے ٹھوکر نیاز بیگ پر کچھ دیر توقف کے دوران مارچ اور استقبال کو پہنچنے والوں سے مختصر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ وزیر اعظم کو چاہئے کہ مارچ کے اسلام آباد پہنچنے سے پہلے ہی  مستعفی ہوجائیں اور ووٹ کا استحقاق بحال کریں۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ مارچ عمران خان کو اسلام آباد سے نکال باہر کرے گا۔ بعد ازاں 2 بجے شب مولانا  فضل الرحمان ٹھوکر نیاز بیگ سے نعروں کی گونج میں روانہ ہوگئے۔ وہاں سے مولانا فضل الرحمان یتیم خانہ چوک پہنچے جہاں خطاب کرنے ہوئے انہوں نے وزیراعظم کو پھر وارننگ دی کہ وہ فوری مستعفی ہوجائیں۔ انہوں نے کہا کہ کراچی سےاسلام آباد تک قوم یکسو ہے کہ عمران خان اقتدار چھوڑدیں۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان نے معیشت تباہ کردی ہے اور اسلام سے بھی ان کو خطرہ ہے۔ مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ وزیر اعظم کے پاس اب بھی مہلت ہے کہ وہ مستعفی ہوجائیں اور بھیانک انجام سے بچیں۔

  قافلہ پھر یتیم خانہ چوک سے مینار پاکستان پہنچا جہاں مقامی لوگ 4 بجے کے بعد اپنے گھروں کو روانہ ہوگئے جنہیں بدھ کو دن 11 مینار پاکستان دوبارہ پہنچنے کی ہدایت کی گئی جبکہ دیگر شہروں سے آئے ہوئے مارچ کے شرکاء کا لاہور میں قیام مینار پاکستان پر ہے۔ مولانا کا خطاب بدہ کو دن 11 بجے متوقع ہے۔

قبل ازیں جب مولانا کا کارواں لاہور کی جانب رواں دواں تھا اور ساہیوال پہنچا تھا تب کارکنوں سے خطاب کرتے ہوئے جے یو آئی سربراہ نے کہا تھا کہ آزادی مارچ پاکستان کی سلامتی اور جعلی حکومت کو مسترد کرنے کی علامت بن چکا ہے۔ساہیوال پہنچنے پر اور اس سے قبل راستے میں بھی مختلف علاقوں میں مارچ کے شرکاء کا زبردست استقبال کیا گیا۔

ویڈیو : آزادی مارچ اوکاڑہ میں داخل، پھولوں اور نعروں سے استقبال

ساہیوال میں خطاب کے دوران انہوں نے حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ سیاسی مقاصد کیلئے احتساب کا ڈھونگ رچایا جارہا ہے، مہنگائی حکومت کی غلط پالیسیوں کا نتیجہ ہے، ہم پاکستان کی سلامتی، آئین کی عملداری کا سفر کررہے ہیں، ساہیوال کے عوام آزادی مارچ میں شرکت کریں۔

ویڈیو : جمعیت علمائے اسلام ف کا آزادی مارچ ساہیوال پہنچ گیا

فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ آج قومی قیادت جیلوں میں ہے، میاں نواز شریف زندگی اور موت کی جنگ لڑ رہے ہیں، احتساب کے نام پر انتقام لیا جارہا ہے، آزادی مارچ پوری قوم کی طرف سے احتساب کو مسترد کرتا ہے، اسلام آباد پہنچ کر آزادی کا جشن منائیں گے۔

اس سے قبل:۔

ملتان میں فجر کے بعد جے یو آئی کے آزادی مارچ کے شرکاء نے فاطمہ جناح ٹاؤن میں پڑاؤ ڈالا۔ ملتان میں اپنے خطاب میں مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ ہم آئین کو مقدس سمجھتے ہیں،اگر آئین کو توڑا جائے گا تو ملک کی سلامتی کو خطرات لاحق ہونگے،پی ٹی آئی کی حکومت نے ملک کی معیشت تباہ کردی،نوجوانوں کا مستقبل تاریک ہوچکا ہے اور یہ آزادی مارچ ان کی ترجمانی کررہا ہے۔ ملتان سے آزادی مارچ تقریبا تین بجے روانہ ہوا اور سوا 4 بجے خانیوال پہنچا۔

منگل کو ملتان میں آزادی مارچ کے شرکاء سے مولانا فضل الرحمان نے تقریبا دو بجے خطاب کیا۔ مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ اس بات پر سب کا اتفاق ہے کہ حکومت جعلی ہے،پاکستان میں عوام کے ووٹ پر ڈاکا برداشت نہیں کریں گے،یہ اب میدان جہاد ہے اور ہم اس جہاد سے پیچھے نہیں ہٹیں گے،یہ ناصرف ناجائز بلکہ نالائق حکومت ہے۔

ویڈیو: مولانا فضل الرحمان خانیوال میں نماز ادا کرنے رک گئے

انھوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کی حکومت نے ملک کی معیشت تباہ کردی،نوجوانوں کا مستقبل تاریک ہوچکا ہے اور یہ آزادی مارچ ان کی ترجمانی کررہا ہے۔میڈیا سے متعلق فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ میڈیا پر قدغن لگ رہی ہے،انھیں تصویر تک نہ دکھانے کی ہدایت دی گئی ہے،حکومت کو میری تصویر سے بھی ڈر لگتا ہے۔

انھوں نے بتایا کہ ہم آئین کو مقدس سمجھتے ہیں،اگر آئین کو توڑا جائے گا تو ملک کی سلامتی کو خطرات لاحق ہونگے۔ انھوں نے یہ بھی کہا کہ جب  بھارت میں نریندر مودی انتخابی مہم چلارہا تھا تو عمران خان نے کہا تھا کہ مودی کامیاب ہوگا اور مسئلہ کشمیر حل ہوگا،عمران خان نے دراصل مودی کی انتخابی مہم چلائی ہے۔

ویڈیو:خانیوال میں مولانا فضل الرحمان کا استقبال

انھوں نے یہ بھی کہا کہ ریاست کہتی ہے کہ ہم دہشت گردی کے خلاف لڑرہے ہیں اور عمران خان کہتا ہے کہ القاعدہ کو تربیت آئی ایس آئی نے دی،کیا ایسے ہوتے ہیں پاکستان کی قیادت کرنے والے؟ عمران خان نے پاکستان کو ہر جگہ تنہا کردیا ہے۔

اس سے قبل ملتان میں آزادی مارچ کے شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان مسلم لیگ نواز کے رہنماء جاوید ہاشمی نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان کو پاکستان کے ہر شہر میں خوش آمدید کہیں گے،نوازشریف کی ہدایت کے مطابق پوری مسلم لیگ مارچ کے ساتھ چلے گی،اس ملک سے آمریت ختم کریں گے۔انھوں نے بتایا کہ پاکستان تحریک انصاف کا صدر رہا ہوں، یہ جانتا ہوں کہ عمران خان پاکستان کی عوام کو نہیں مانتا،اس لیے اس کو لیڈر ہی نہیں مانتا۔

ویڈیو: آزادی مارچ کے ملتان میں فضائی مناظر

اس موقع پر پاکستان مسلم لیگ نواز کے رہنماء میاں جاوید لطیف نے اپنے خطاب میں کہا کہ یہ مولانا فضل الرحمان کا مارچ 22 کروڑ لوگوں کا مارچ ہے،کشمیر کو آزاد کروانے سے پہلے اپنی آزادی چاہئے ہوگی۔

واضح رہے کہ پیر اور منگل کی درمیانی شب جنوبی پنجاب کے چھوٹے بڑے شہروں سے ہوتا ہوا آزادی مارچ علی الصبح ملتان پہنچا۔آزادی مارچ کے اطراف انٹرنیٹ کی سہولت بلاک کرنے سے میڈیا اور شرکاء کو سخت دشواری کا سامنا کرنا پڑا۔ ملتان میں مولانا فضل الرحمان نے اپنے بیٹےاسد محمود کے گھر پر قیام کیا۔ملتان میں مولانا فضل الرحمان نے رہائشگاہ پر مختلف سیاسی رہنماؤں سے ملاقاتیں کی۔ ان رہنماؤں میں مظفر گڑھ سے پیپلز پارٹی کے ایم این اے نواب افتخار بھی شامل تھے۔مسلم لیگ نواز کے وفد نے بھی مولانا فضل الرحمان سے مللاقات کی۔ وفد میں سینیٹررانا محمود الحسن،مخدوم جاوید ہاشمی بھی شامل تھے۔ ملتان میں مولانا فضل الرحمان مختصر خطاب کے بعد آزادی مارچ کی قیادت کرتے ہوئے لاہور کی جانب روانہ ہوئے۔

ویڈیو:ملتان میں آزادی مارچ کے شرکاء کا ناشتہ

بلوچستان، سندھ اور جنوبی پنجاب کے تمام قافلے ملتان پہنچے۔اس موقع پر سیکورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے ہیں ۔اس سے قبل احمد پور شرقیہ میں ٹول پلازہ پر مولانا فضل الرحمان نے شرکاء سے مختصر ملاقات کی اور مصافحہ بھی کیا۔

آزادی مارچ کا قافلہ ملتان پہنچ گیا

لاہور میں مارچ کے شرکاء کے استقبال کے لیے کیمپ لگائے گئے۔ٹھوکر نیاز بیگ سمیت ملتان چونگی اور چوک یتیم خانہ پر تاجر برادری نے کیمپ لگایا ہے۔ پیپلزپارٹی کی جانب سے ثمن آباد کے علاقے میں کیمپ قائم کیا گیا ہے۔مسلم لیگ نواز نے چوبرجی میں آزادی مارچ کے شرکاء کے لیے کیمپ قائم کیا ہے۔

جمیعت علماء اسلام پاکستان کی جانب سے داتا دربار پر بھی کیمپ قائم کیا گیا ہے۔ لاہور میں جمعیت الحدیث نے بھاٹی چوک میں کیمپ لگایا ہے۔راوی روڈ پر بھی آزادی مارچ کے شرکاء کے استقبال کے لیے کیمپ قائم ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
JUIF, FAZLUR REHMAN, AZADI MARCH, MIAN CHUNNU, PTI, IMRAN KHAN
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube