ہوم   >  پاکستان

وفاقی کابینہ میں نیب ترمیمی آرڈیننس کی منظوری

4 weeks ago

فوٹو: آن لائن

وفاقی کابینہ نے نیب ترمیمی آرڈیننس کی منظوری دے دی جب کہ وزیراعظم عمران خان نے اسپتالوں کی اصلاحات سے پیچھے نہ ہٹنے کا بھی کہہ دیا ہے۔

منگل 22 اکتوبر کو وزیراعظم کی زیرِ صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا جس میں 6 نئے قوانین آرڈیننس کے ذریعے نافذ کرنے کی منظوری دے دی گئی۔

وفاقی کابینہ نے نیب ترمیمی آرڈیننس کی منظوری کے ساتھ ساتھ کرتارپور معاہدے کی بھی منظوری دے دی۔

اسکے علاوہ اجلاس میں بے نامی ٹرانزیکشن ایکٹ 2017 کا ترمیمی آرڈیننس، خواتین کو وراثت میں حقوق فراہم کرنے کا آرڈيننس، لیگل ایڈ اینڈ جسٹس اتھارٹی کے قیام کا آرڈيننس جب کہ وراثتی سرٹیفیکیٹ اور اعلیٰ عدالتوں کے ضابطہ اخلاق کا آرڈیننس بھی منظور کر لیا گیا۔

اجلاس میں پنجاب اور خیبر پختونخوا میں ڈاکٹرز کی ہڑتال کا تذکرہ بھی ہوا جس پر وزیراعظم نے کہا کہ اسپتالوں کی اصلاحات سے پیچھے نہیں ہٹیں گے۔

کابینہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزيراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ مارچ اور دھرنے سے کسی کو کچھ نہيں ملے گا، مارچ کی باتیں ملک دشمنی کے سوا کچھ نہیں، ہمیں مسئلہ کشمیر اور معیشت کی فکر ہے جبکہ اپوزیشن کو مارچ کی پڑی ہوئی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ملکی معیشت بہتر ہونے اور سرمایہ کاری آنے لگی ہے، مارچ والے سرمایہ کاروں کو کیا پیغام دے رہے ہیں، یہ جو کچھ کر رہے ہیں، عالمی برادری کیا تاثر لے گی۔

اجلاس کے دوران وفاقی کابینہ کے ارکان نے جمعیت علمائے اسلام (ف) کے آزادی مارچ کو ہر صورت ناکام بنانے کے عزم کا اظہار کیا۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں
 
 
 
 
 
 
 
Federal Cabinet, NAB, MTI ordinance, hospital