ہوم   >  پاکستان

غیرملکی سفارتکارمرضی کی جگہ گئے،ایل اوسی کاجائزہ لیا

3 weeks ago

بھارتی بےبنیاد دعوے اورجھوٹ بےنقاب

غیر ملکی سفیروں اور میڈیا کے لائن آف کنٹرول (ایل او سی) کے دورے پر ترجمان پاک افواج کا کہنا ہے کہ غیر ملکی سفارت کاروں کو پیشکش کی کہ جہاں مرضی جائیں اور خود صورتِ حال کا جائزہ لیں۔

غیر ملکی سفیروں کے لائن آف کنٹرول (ایل او سی) کے دورے کے موقع پر پاک فوج کے شعبہ تعلقاتِ عامہ (آئی ایس پی آر) کے سربراہ میجر جنرل آصف غفور بھی کنٹرول لائن پر موجود رہے، جب کہ ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر محمد فیصل بھی دورہ کے دوران موجود رہے۔

انہوں نے پیش کش کی ہے کہ غیر ملکی سفارت کار جہاں مرضی جائیں اور خود صورتِ حال کا جائزہ لیں۔

غير ملکي سفيروں نے وادی نيلم ميں بھارتی فوج کی گولا باری اور فائرنگ سے ہونی والی تباہی اپنی آنکھوں سے ديکھ لی۔ بھارتی ناظم الامور خود آئے نہ ہی مبینہ لانجنگ پیڈز کی نشاندہی کی۔

 

غیر ملکی سفيروں نے بھارتی فائرنگ سے سب سے زيادہ متاثر ہونے والے گاؤں نوسيدہ کے تباہ کن مناظر خود ديکھے۔

لائن آف کنٹرول آمد پر ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف عبدالغفور نے غیر ملکی سفارت کاروں اور ذرائع ابلاغ کو بریفنگ بھی دی۔ سفارت کاروں کو لائن آف کنٹرول پر خود گھوم پھر کر صورتِ حال کا جائزہ لینے کی پیش کش کی گئی۔

انہوں نے کہا کہ بھارتی ہائی کمیشن کا کوئی اہل کار یا سفارت کار کنٹرول لائن جانے کے لیے نہیں پہنچا، جب کہ غیر ملکی سفارت کار اور میڈیا گروپ وادی نیلم پہنچے، جہاں انہوں نے لائن آف کنٹرول پر جوڑا سیکٹر سمیت دیگر حصوں کا دورہ کیا۔

ڈی جی آئی ایس پی آر نے یہ بھی کہا کہ بھارتی ہائی کمیشن کے اسٹاف میں سفارت کاروں کے ساتھ کنٹرول لائن جانے کی اخلاقی جرأت نہیں، غیر ملکی سفارت کار اور میڈیا ارکان کا گروپ کنٹرول لائن پر سچ سامنے لائے گا۔

واضح رہے کہ بھارتی آرمی چیف کے ایل او سی پر مبینہ کیمپس تباہ کرنے کے جھوٹے اور بے بنیاد دعوے کو بے نقاب کرنے کے لیے پاک فوج نے پاکستان میں غیر ملکی سفیروں اور ہائی کمشنروں کو کنٹرول لائن پر نوسہری، شاہ کوٹ اور جورا سیکٹرکا دورہ کرایا ہے۔

رواں ماہ 19 اور 20 اکتوبر کو بھارتی فورسز نے ایل او سی کے 3 سیکٹرز پر بلا اشتعال فائرنگ کی، جس کے نتیجے میں ایک فوجی جوان اور 5 شہری شہید ہوئے تھے۔ پاکستان کی جانب سے کی گئی جوابی کارروائی میں 9 بھارتی فوجی ہلاک اور متعدد زخمی، جب کہ دو بنکر تباہ ہوئے۔

 
TOPICS:

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں