ہوم   >  پاکستان

وزیراعظم نے حب میں 1320میگاواٹ کے بجلی منصوبے کاافتتاح کردیا

3 weeks ago

کرپشن کے خاتمے سے غیرملکی سرمایہ کاری بڑھی، عمران خان

وزيراعظم نے حب ميں 1320 ميگا واٹ کے بجلی منصوبے کا افتتاح کردیا، خطاب ميں عمران خان کا کہنا تھا ملک سے کرپشن ختم کرکے بيرون ملک سے آنے والی سرمايہ کاری کو بڑھانے کی کوشش ميں کاميابی حاصل ہوئی ہے، 22، 23 سالوں سے کہہ رہا ہوں ملک کا سب سے بڑا مسئلہ کرپشن ہے، حکومت ملی تو ملک کو تاريخی خسارے کا سامنا تھا۔

وزیراعظم عمران خان نے 1320 میگا واٹ کے حب پاور جنریشن پلانٹ کا افتتاح کردیا، پروقار تقریب میں وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان، چینی سفیر، وفاقی وزراء، پراجیکٹ افسران سمیت دیگر اہم شخصیات نے بھی شرکت کی۔

اس موقع پر تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ سی پیک کے تحت جوائنٹ پراجیکٹ پاکستان کیلئے خوش آئند ہیں، حکومت ان کی ہر طرح مدد اور سہولت فراہم کرے گی، میری خواہش ہے کہ پاور پراجیکٹ کیلئے 20 فیصد کوئلہ تھر کے ذخائر سے حاصل کیا جائے تاکہ ملک میں زر مبادلہ بچایا جاسکے۔

مزید جانیے : وفاقی وزراء لفٹ نہیں کراتے،پی ٹی آئی اراکینِ سندھ اسمبلی

عمران خان کا کہنا ہے کہ اس وقت ملک کا سب سے بڑا مسئلہ کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ ہے، ہماری حکومت آئی تو خسارہ 20 ارب ڈالر تھا جس کے باعث مسائل پیدا ہوئے، روپے کی قدر میں کمی اور مہنگائی میں اضافہ ہوا، ہم چاہتے ہیں کہ جو بھی پار پراجیکٹ بنے وہ لوکل انرجی اور فیول سے بنیں، پاکستان میں پانی سے بجلی بنانے کی صلاحیت تقریباً 50 ہزار میگا واٹ ہے۔

انہوں نے کہا کہ ماضی کی حکومتوں نے پانی سے بجلی بنانے پر توجہ نہیں دی جس کے باعث ہمیں مہنگے امپورٹڈ فیول پر انحصار کرنا پڑتا ہے، اس لئے جب ڈالر مہنگا ہوتا تو بجلی بھی مہنگی ہوجاتی ہے۔

عمران خان نے کراچی کیلئے ڈی سیلینیشن پلانٹ بنانے کی بھی ہدایت کی، ان کا کہنا تھا کہ شہر قائد کو پانی کی شدید قلت کا سامنا ہے، یہ منصوبہ جلد شروع کیا جائے تاکہ شہریوں کا دیرینہ مسئلہ حل ہو۔

وزیراعظم نے مزید کہا کہ چيني سرمايہ کاروں کا پاکستان پر اعتماد بحال ہوا ہے، کرپشن ختم کرکے بيرون ملک سے آنیوالی سرمايہ کاری کو بڑھانے کی کوشش ميں کاميابی حاصل ہوئی ہے، 22، 23 سالوں سے کہہ رہا ہوں ملک کا سب سے بڑا مسئلہ کرپشن ہے، مسلسل سرمایہ کاروں کو آسانیاں دینے کی کوشش کررہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں : متحدہ وفدکی وزیراعظم سے ملاقات، لاپتہ کارکنوں کی بازیابی کامطالبہ 

عمران خان نے کہا کہ حکومت ملی تو ملک قرضوں ميں ڈوبا ہوا تھا، بلوچستان معدنی وسائل سے مالا مال صوبہ ہے، اس سے فائدہ اٹھا کر بڑے مسائل حل کرسکتے ہيں، ریکوڈک پر کام کرنیوالی کمپنی سے دوبارہ بات چیت کررہے ہیں تاکہ وہی اس منصوبے پر کام کرے، اس کمپنی کے اعلیٰ افسر نے بتایا کہ ریکوڈک میں دنیا کے سب سے بڑے سونے کے ذخائر موجود ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ دنیا کی بڑی بڑی کمپنیاں پاکستان آنا چاہتی ہیں، آسٹریلیا کی مائننگ جائنٹ اینڈریو فاریسٹر بھی یہاں سرمایہ کاری کا خواہشمند ہے، کارکے اور ریکوڈک میں کرپشن جیسے واقعات کے باعث انٹرنیشنل کمپنیاں پاکستان آنے سے کتراتی ہیں، کرپشن کے باعث غیر ملکی سرمایہ کاری نہیں آتی۔

وزیراعظم نے وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان کو خوشخبری سناتے ہوئے کہا کہ سی پیک کے تحت چین اب بلوچستان کے فشریز کے شعبے میں بھی تعاون کرنے آرہا ہے، صرف اس شعبے سے ہی صوبہ ترقی کی کئی منازل طے کرلے گا، چین کے ساتھ مل کر زراعت کے شعبے کی ترقی کیلئے بھی منصوبے لے کر آرہے ہیں، چین کے تعاون سے کسانوں کیلئے نئی تکنیک لارہے ہیں۔

 
TOPICS:

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں
 
 
 
 
 
 
 
IMRAN KHAN, PTI, CHINA, CPEC, HUB, POWER GENERATION PLANT, COAL, THAR, MINES, BALOCHISTAN,