ہوم   >  پاکستان

سعودیہ،ایران جنگ کے بادل چھٹتے دکھائی دے رہے ہیں، وزیرخارجہ

4 weeks ago

پاکستانی کی کوششوں سے دونوں ممالک بات چیت پرآمادہ ہوگئے

شاہ محمود قریشی کا دعویٰ ہے کہ ایران اور سعودی عرب نے مذاکرات پر آمادگی ظاہر کردی، عمران خان کی دونوں ممالک کی قیادت سے ملاقاتیں انتہائی مفید رہیں، جنگ کے بادل چھٹتے دکھائی دے رہے ہیں، سعودی عرب نے نے بھی غلط فہمیوں کو گفتگو سے حل کرنے پر اتفاق کیا۔

اسلام آباد میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان کے ہمراہ وزیراعظم عمران خان کے دورہ سعودی عرب اور موجودہ سیاسی صورتحال پر میڈیا کو بریفنگ دی۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے ديکھا دو برادر ممالک ميں کشيدگی جنم لے رہی ہے، پاکستان کے دونوں ممالک کے ساتھ اچھے تعلقات ہيں، پاکستان نے فيصلہ کيا کشيدگی کم کرنے ميں کردار ادا کرنا چاہئے، اگر حالات بگڑے تو پورا خطہ متاثر ہوگا، تیل کی قیمت بڑھنے سے پاکستان سمیت تمام ممالک پر اثر پڑے گا۔

مزید جانیے : سعودی ایران کشیدگی میں مغربی طاقتوں کےمفادات پوشیدہ ہیں،عمران

وزیراعظم عمران خان نے اتوار کو ایران اور گزشتہ روز سعودی عرب کا ہنگامی دور کیا تھا، جس میں صدر حسن روحانی، سپریم لیڈر علی خامنہ ای، شاہ سلمان اور ولی عہد محمد بن سلمان سمیت دیگر اعلیٰ حکام سے ملاقاتیں ہوئیں۔

شاہ محمود قریشی نے بتایا کہ وزیراعظم عمران خان کی ایران اور سعودی عرب میں قیادت سے نشستیں مفید رہیں، دونوں ممالک بات چیت کیلئے تیار ہیں، ايران نے مذاکرات پر آمادگی کا اظہار کيا ہے، جنگ کے بادل چھٹتے دکھائی دے رہے ہیں، سعودی عرب نے بھی غلط فہمیوں کو بات چیت کے ذریعے حل کرنے پر اتفاق کیا۔

وزیر خارجہ کا کہنا ہے کہ وزیراعظم نے ایران اور سعودی عرب کی قیادت کا ملاقاتوں پر شکریہ ادا کیا، عمران خان نے رہنماؤں کو کشمیر کی کشیدہ صورتحال اور بھارت کے جابرانہ اقدامات سے بھی آگاہ کیا، وزیراعظم جلد علماء و مشائخ سے ملاقات کریں گے۔

مولانا فضل الرحمان کے دھرنے پر گفتگو کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ سياسی معاملات کو سياسی انداز ميں سلجھانے کی صلاحيت رکھتے ہيں، دھرنے والوں سے مذاکرات کيلئے تيار ہيں، مذاکرات کيلئے وزیر دفاع پرويز خٹک کی سربراہی ميں کميٹی تشکيل دیدی گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں : ایران سےمذاکرات کیلئے ٹرمپ نےعمران کو مینڈیٹ دیدیا

مولانا فضل الرحمان نے 27 اکتوبر سے ملک بھر میں آزادی مارچ کے آغاز کا اعلان کر رکھا ہے، جس میں شرکت کیلئے مسلم لیگ ن اور پیپلزپارٹی سے بھی بات چیت جاری ہے، پختونخوا ملی عوامی پارٹی کے سربراہ محمود خان اچکزئی اور نیشنل پارٹی کے سربراہ میر حاصل بزنجو جمعیت علمائے اسلام (ف) کے مارچ میں شرکت کا اعلان کرچکے ہیں۔

وزیر خارجہ نے 27 اکتوبر کی تاریخ پر اعتراض کرتے ہوئے واضح کیا کہ ہميں کوئی خوف نہيں، کسی کو غلط فہمی نہيں ہونی چاہئے۔ انہوں نے بلاواسطہ طور پر اپنے دھرنے کی ناکامی کو تسلیم کرتے ہوئے کہا کہ دھرنوں سے حکومتيں نہيں جاتيں، ہميں 126 دن کا تجربہ ہے۔

شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ پاکستان معاشی استحکام کے دور ميں داخل ہورہا ہے، ملک میں سرمایہ کاری اور سیاحت کے مواقع بڑھ رہے ہیں۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں
 
 
 
 
 
 
 
SHAH MEHMOOD QURESHI, IMRAN KHAN, IRAN, PAKISTAN, SAUDI ARABIA, PM, HASSAN ROUHANI, SHAH SALMAN, DIALOGUE, USA,