ہوم   >  پاکستان

کشمیر کی صورتحال، اقوام ذمہ داریاں پوری کرے، وزیر خارجہ

4 weeks ago

اپوزیشن رہنماؤں کو سرینگر ایئرپورٹ پر روکنا فسطائیت ہے، شاہ محمود قریشی



شاہ محمود قریشی کہتے ہیں کہ بھارتی فوج کی جانب سے سری نگر ایئرپورٹ پر راہول گاندھی اور دیگر اپوزیشن رہنماؤں کو روکنا فسطائیت ہے، کشمیر پر مودی کے فیصلوں نے بھارت کو بھی تقسیم کر دیا، سیکریٹری جنرل اقوام متحدہ کون فون کرکے تصادم روکنے کیلئے کردار کی ذمہ داری پوری کرنے اور مقبوضہ کشمیر کی حیثیت کی تبدیلی کا نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے، انہیں آزاد کشمیر کے دورے کی دعوت بھی دی ہے۔


وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے بتایا کہ سیکریٹری جنرل اقوام متحدہ سے رابطہ کرکے مقبوضہ کشمیر کا معاملہ سلامتی کونسل میں لے جانے پر شکریہ ادا کیا، انہیں بتایا کہ مقبوضہ کشمیر میں 20 روز سے مسلسل کرفیو نافذ ہے، کل نماز جمعہ کے بعد کشمیریوں کو اقوام متحدہ کے دفتر جانے سے بھی روکدیا گیا، سیکریٹری جنرل سے مطالبہ کیا ہے کہ اقوام متحدہ تصادم روکنے کیلئے کردار کی ذمہ داری پوری کرے، اقوام متحدہ اپنی قراردادوں کے مطابق مقبوضہ کشمیر کی حیثیت کی تبدیلی کا نوٹس لے۔



مزید جانیے : کشمیریوں کی داستانیں سن کر پتھر بھی روپڑیں، کانگریس 


ان کا کہنا ہے کہ سیکریٹری جنرل سے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر کی موجودہ صورتحال پر سیکورٹی کونسل کے مستقل ارکان سے وہ خود رابطہ کریں، سیکریٹری جنرل اور سلامتی کونسل کے ارکان کے درمیان مسلسل رابطے کی ضرورت ہے، کشمیری اقوام متحدہ کی طرف دیکھ رہے ہیں، اگر کشمیری مایوس ہوئے تو یہ عالمی برادری کی ناکامی ہوگی۔


 وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے سیکریٹری جنرل اقوام متحدہ کو آزاد کشمیر کے دورے کی دعوت دے دی، ان سے کہا کہ آپ خود کشمیر کا دورہ کرکے بھارت کے جارحانہ اقدامات کا جائزہ لیں۔ یو این سیکریٹری جنرل نے بھارتی وزیراعظم نریندر مودی سے رابطہ کرنے کا وعدہ کیا ہے۔



تفصیلات جانیں : پاکستان سے جنگ سے پہلے بھارت کو سوچنا ہوگا،صدر


راہول گاندھی سمیت بھارتی اپوزیشن رہنماؤں کو سری نگر ایئرپورٹ پر روکنے اور شہر جانے کی اجازت نہ دینے پر رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے وزیر خارجہ نے کہا کہ ایسے اقدامات بھارت کی فسطائیت ثابت کرتے ہیں، جن سے بھارت کے جمہوری دعووں کی قلعی کھل گئی، مودی کے فیصلوں نے بھارت کو بھی تقسیم کردیا، آج اپوزیشن رہنماؤں کو سرینگر ایئر پورٹ سے واپس بھجوانا اس کا ثبوت ہے۔


پریس کانفرنس میں ان کا مزید کہنا تھا کہ فضائی حدود پر پابندی سے بلاوجہ بھارت کو بات کا بتنگڑ بنانے کا موقع نہیں دینا چاہتے، فضائی حدود سے متعلق میری ذاتی رائے مختلف ہے لیکن ترجیح قومی مفاد ہے، مودی کے اس دعوے میں کوئی حقیقت نہیں کہ پاکستان میں قیادت کا فقدان ہے، پاکستان کی پوری قیادت کشمیر کے معاملے پر یکساں سوچ رکھتی ہے۔



یہ بھی پڑھیں : پاکستان پر حملہ ہوا تو آخری جنگ ہوگی،شیخ رشید


انہوں نے کہا کہ پاکستان نے ہمیشہ معاہدوں کی پاسداری کی، بھارت نے شملہ معاہدہ بھی پامال کیا، پاکستان دو طرفہ مذاکرات کیلئے ہمیشہ کوشاں رہا، بھارت نے فرار کا راستہ اختیار کیا، سلامتی کونسل کے اوپن اجلاس کے حوالے سے مشاورت جاری ہے، مزید پیشرفت کیلئے تجاویز مرتب کرکے وزیراعظم کو منظوری کیلئے پیش کریں گے، کابینہ کی توثیق کے بعد معاملے کو انٹرنیشنل فورم پر اٹھانے کیلئے اقدامات کئے جائیں گے۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں