ہوم   >  پاکستان

بلوچستان کے 200 ینگ ڈاکٹرز نے استعفیٰ کی دھمکی دیدی

2 months ago

File Photo

ینگ ڈاکٹرز بلوچستان نے مطالبات کی منظوری کیلئے صوبائی حکومت کو پیر تک کا الٹی میٹم دے دیا، مطالبات تسلیم نہ ہونے پر 200 ڈاکٹروں نے استعفیٰ دینے کی دھمکی دی ہے۔

ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن بلوچستان کے صدر ڈاکٹر یاسر نے کوئٹہ میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے دھمکی دی ہے کہ اگر حکومت نے پیر تک ان کے مطالبات پورے نہ کئے تو وہ اجتماعی استعفیٰ دے دیں گے۔

ڈاکٹر یاسر کا کہنا تھا کہ دنوں گائنی وارڈ میں خاتون ڈاکٹر کی ویڈیوز بنائی گئیں، جس کیخلاف ڈاکٹرز نے پُرامن احتجاج کیا مگر ایک صوبائی وزیر نے اپنے مسلح محافظوں کیساتھ ڈاکٹروں پر دھاوا بولا اور انہیں دہشتگرد قرار دیا۔

صدر ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن بلوچستان نے مزید کہا کہ صوبائی وزیر صحت نے سہولیات اور ڈاکٹروں کے تحفظ کے حوالے سے یقین دہانی کرائی مگر بیوروکریسی وزیر صحت کی باتوں کو ہوا میں اڑا رہی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ایم ایس ڈی کا بجٹ لیپس ہوگیا اور اسپتال میں ادویات موجود نہیں، ڈاکٹر اسپتالوں میں کسی کیلئے نہیں عوام کیلئے آتے ہیں، ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن میں ایسا کوئی ڈاکٹر نہیں جو ڈبل ڈیوٹی یا تنخواہیں وصول کررہا ہو مگر حکومت صرف انتقامی کارروائی کیلئے ایسے بہانوں کا سہارہ لے رہی ہے۔

ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کے عہدے داروں کا کہنا تھا کہ پیر تک حکومت کی جانب سے مطالبات پر عملدرآمد کا انتظار کررہے ہیں، مطالبات پورے نہ ہوئے تو 200 سے زائد ڈاکٹرز اجتماعی استعفیٰ دے دیں گے۔

 

One Comment

  1. Avatar
    Nayyar Khan Loni   August 25, 2019 7:37 pm/ Reply

    Such acts against the educated community is extremely shameful. Govt must provide security to the doctors in hospitals.

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں