ہوم   >  بلاگز

بھائی نے بات نہ ماننے پر بہن کا پاؤں کاٹ دیا

3 months ago

ڈیرہ غازی خان کے علاقے کوٹ چھٹہ میں بھائی نے بات ماننے سے انکار پر بہن کا پاؤں کاٹ دیا۔ متاثرہ بہن علیحدگی کے بعد بھائی کے گھر رہ رہی تھی۔

ڈیرہ غازی خان کے علاقے کوٹ چھٹہ کے نواحی قصبے مانہ احمدانی میں رہنے والی 40 سالہ سلمی بی بی نے شوہر سے علیحدگی کے بعد اپنے بھائی اور بہن کے گھر کو اپنا مسکن بنا لیا تھا، جہاں وہ لوگ کسی نہ کسی حد تک اُس کا خیال رکھتے اور گزر اوقات کیلئے خرچہ اٹھاتے۔ خاتون کی کوئی اولاد نہ تھی، تو چار و ناچار وہ بہن بھائی کے گھر رہنے پر مجبور تھیں۔

کہنے کو شوہر سے علیحدگی کے بعد بھائی نے رہنے کو چھت دی اور کھانے کو کھانا دیا مگر اپنے بیان میں سلمیٰ بی بی کا کہنا تھا کہ تنگ دستی کا یہ عالم تھا کہ کبھی وہ خرچے کیلئے بھائی تو کبھی بہن کا در کھٹکھٹاتی تھی، تاہم بھائی کو یہ بات ایک آنکھ نہ بھاتی تھی مگر مجبور تھی۔

آنکھوں میں آتے آنسوؤں کو اپنی قمیض کی آستین سے پوچتے ہوئے سلمیٰ نے بتایا کہ جب بہن کے بچے مجھ سے بیزار ہوجاتے تو میں بھائی کی دہلیز پکڑ لیتی، وہاں والے جب مجھ سے اُکتا جاتے تو پھر واپس بہن کے گھر جانا پڑتا اور میں کہاں جاتی ؟۔

وقوعہ کے روز بھی کچھ ایسا ہی ہوا۔ سلمیٰ کا کہنا تھا کہ جمعہ کو بھائی نے اُسے دوسری بہن کے گھر جانے سے روکا، جس پر وہ نہیں مانی۔ بھائی جو پہلے بھی اکثر مارنے اور پیر کاٹنے کی دھمکی دیتا تھا، اس دن اپنے قول پر عمل کر ڈالا اور ٹوکے( جو قصائی کی دکان پر گوشت کاٹنے کے کام آتا ہے) سے اس کو زمین پر گرا کر اس کا پاؤں کاٹ دیا۔

اس موقع پر گھر میں موجود واحد فرد اس کی بھابی ہی تھیں، انہوں نے ہر ممکن شوہر کو اس انتہائی اقدام سے روکنے کی کوشش کی، تاہم غصے اور ہاتھ میں تیز دھارآلے کے سامنے اُس کی ایک نہ چلی اور بھائی نے بہن کا پاؤں کاٹ دیا۔

واقعہ کی اطلاع بھابی نے خود پولیس کو دی، جس کے بعد ملزم کو گرفتار کرکے آلہٰ برآمد کرلیا گیا جب کہ متاثرہ خاتون کو ٹیچنگ اسپتال منتقل کردیا گیا۔

سما ڈیجیٹل نے جب اسپتال انتظامیہ سے خاتون کی حالت اور آپریشن سے متعلق دریافت کرنا چاہا تو انتظامیہ نے صرف اتنا ہی موقف دیا کہ خاتون کو انڈر آبزرویشن رکھا گیا ہے، یہاں انہیں تمام سہولیات اور چیزیں مفت فراہم کی جا رہی ہیں، دیگر معلومات سے میڈیا کو جلدی آگاہ کردیا جائے گا۔

دوسری جانب بہن کا پاؤں کاٹنے والے ملزم بھائی کو پینل کوڈ کی سیکشن 334 کے تحت گرفتار کرلیا۔ اس سیکشن کے تحت زیادہ سے زیادہ سزا 10 سال ہے۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں