ہوم   >  پاکستان

کے الیکٹرک نے کرنٹ لگنے سے اموات کا ملبہ کے ایم سی پر ڈال دیا

4 months ago

میئر کراچی وسیم اختر کی جانب سے مقدمہ درج کرنے کے اعلان کے الیکٹرک نے کراچی میں کرنٹ لگنے سے شہریوں کی اموات کا ملبہ بلدیہ عظمیٰ پر ڈال دیا۔

کراچی میں حالیہ مون سون بارشوں کے دوران کرنٹ لگنے سے 22 سے زائد افراد موت کے منہ میں چلے گئے۔ ان میں سے بعض افراد بجلی کے پول کو چھونے کے باعث موت کے منہ میں چلے گئے جبکہ بعض افراد بارش کے کھڑے پانی میں کرنٹ لگنے سے جاں بحق ہوگئے۔

نیپرا کی ٹیم نے بھی اموات کے بعد کراچی کا دورہ کیا اور تحقیقات کے بعد اموات کی ذمہ داری کے الیکٹرک پر ڈالتے ہوئے جاں بحق افراد کے لواحقین کو معاوضہ دینے کی ہدایت کی تھی مگر اس کے باوجود بارشوں کے دوسرے مرحلے میں مزید کئی افراد جان سے چلے گئے جس پر شہریوں نے شدید غم و غصے کا اظہار کرتے ہوئے کراچی کو لاوارث قرار دیا۔

میئر کراچی وسیم اختر نے شہریوں کے احتجاج کے بعد کے الیکٹرک کے خلاف مقدمہ درج کرانے کا اعلان کیا اور ڈیفنس میں جاں بحق ہونے والے تین دوستوں کا مقدمہ کے الیکٹرک کے اعلیٰ حکام کے خلاف درج کروا دیا۔

مقدمہ درج ہونے کے بعد کے الیکٹرک نے ردعمل میں کرنٹ لگنےکے واقعات کا ملبہ کراچی میٹرو پولٹن کارپوریشن پر ڈالتے ہوئے کہا کہ کے ایم سی نے پانی کی نکاسی کیلے کوئی انتظام نہیں کیا۔ بجلی تنصیبات کے گرد جمع پانی حادثات کا باعث بن رہا ہے۔

کے الیکٹرک کے ترجمان کا کہنا ہے کہ بجلی بحالی کی کوششوں میں بھی کے ایم سی نے کوئی تعاون نہیں کیا۔ مئیر کراچی اور کے ایم سی پانی کی نکاسی کیلئے کردار ادا کریں۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں