ہوم   >  پاکستان

آصف زرداری کے مہاجر مخالف بیان پر وسیم اختر اور مصطفیٰ کمال کا اظہارِ مذمت

1 month ago

موجودہ اور سابق مئیرکراچی نے کہا ہے کہ جب قوم اتحاد و يکجہتي کا مظاہرہ کررہي تھي تو آصف علي زرداري نے انتشار کي بات کردي۔انھوں نے کہا کہ پي پي رہنما نفرت کو ہوا دے رہے ہيں، ہم لٹے پٹے نہيں آئے،پاکستان چلانے کے ليے قائداعظم کو بلينک چيکس ديے، تحريک تو چلي ہي ان علاقوں ميں جو آج پاکستان کا حصہ نہيں ہے۔

ميئر کراچي وسيم اختر کي جانب سے آصف زرداري کے بيان کي شديد مذمت کی گئی ہے۔ جامعہ کراچي ميں اے پي ايم ايس او کي تقريب سے خطاب ميں انھوں نے کہا کہ ہمارے آباؤ اجداد بھاگ کر نہيں آئے، ثابت کرنے کي ضرورت نہيں کہ ہمارے باپ داداؤں نے کيا کيا تھا۔ انھوں نے کہا کہ مہاجروں نے ووٹ دے کر مجھے ميئر بنايا ہے، ان مہاجروں کي تذليل برداشت نہيں کي جاسکتي۔

پاک سرزمين پارٹي کے مصطفيٰ کمال نے پي ايس ايس ايف کي جشنِ آزادي کي تقريب سے خطاب ميں کہا کہ پاکستان بنانے کي تحريک چلي ہي ان علاقوں ميں جو آج اس ملک ميں شامل نہيں۔ انھوں نے کہا کہ ہمارے باپ دادا نے 14 اگست کي صبح ريڈيو پر خبر نہيں سني تھي کہ پاکستان آزاد ہوگيا،ہم نے قرباني دي ہے اور بالکل لُٹے پٹے نہيں آئے تھے، اپنے ساتھ وہ کچھ لے کرآئے تھے کہ يہاں آ کر پاکستان چلانے کے ليے قائداعظم کو بلينک چيکس ديے تھے۔

آصف زرداری کے مہاجروں سے متعلق جملوں پر ایم کیوایم کا قومی اسمبلی میں احتجاج

ميئر کراچي وسیم اور پي ايس پي سربراہ مصطفی کمال کا کہنا تھا کہ يہ نفرت کي سياست نہيں بلکہ متحد ہونے کا وقت ہے، جو کہتے تھے کہ ہم ٹوٹ گئے وہ ديکھ ليں کہ ہم جڑگئے ہيں۔

 اس کے علاوہ، پارلیمنٹ کے اجلاس سے گذشتہ روز آصف زرداری کے مہاجروں کے حوالے سے ریمارکس پر ايم کيوايم نے قومي اجلاس سے جمعرات کو واک آؤٹ کرديا۔ خالد مقبول صدیقی نے اپنے خطاب میں کہا کہ مسلمانوں نے ہجرت کے وقت عظيم جاني و مالي قربانياں ديں، مہاجروں کا پاکستاني ہونا پاکستان کے وقار کي نشاني ہے، ہماری قربانیوں کا اعتراف کرنا چاہیئے تھا۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں