ہوم   >  پاکستان

لیاری والے پانی کی بوند بوند کو ترس گئے

4 months ago

کراچي ميں پاني کے ستائے لياري والے ايک بار پھر ماڑي پور روڈ پر نکل آئے، ضلعي انتظاميہ نے مذاکرات کے بعد احتجاج ختم کروايا مگر مظاہرين سے دو دنوں کا وقت مانگا ہے۔ کراچي کا ماڑي پور روڈ ان دنوں پاني کے بحران سے ستائے ہوئے لوگوں کا احتجاجي مرکز بنا ہوا ہے، لياري...



کراچي ميں پاني کے ستائے لياري والے ايک بار پھر ماڑي پور روڈ پر نکل آئے، ضلعي انتظاميہ نے مذاکرات کے بعد احتجاج ختم کروايا مگر مظاہرين سے دو دنوں کا وقت مانگا ہے۔


کراچي کا ماڑي پور روڈ ان دنوں پاني کے بحران سے ستائے ہوئے لوگوں کا احتجاجي مرکز بنا ہوا ہے، لياري کے رہنے والے مرد و خواتين کہتے ہيں آخر کب تک ايسا چلے گا پہلے احتجاج کيا تو صرف پندرہ دن پاني فراہم کيا گيا۔


احتجاج کے باعث ماڑي پور روڈ پر تو ٹريفک جام ہوگيا اور اطراف کي سڑکوں پربھي ٹريفک کا دباؤ رہا جبکہ مسافروں کو سخت پريشاني جھيلنا پڑي۔


ضلع انتظاميہ کی جانب سے اسسٹںٹ کمشنر عبدالکريم ميمن مذاکرات کیئے تو مسئلہ کے حل کے لئے دو دن کا وقت مانگ ليا تاہم 5 گھنٹوں کے بعد ماڑي پور روڈ پر ٹريفک کي رواني بحال ہوئي


واضح رہے کہ دو روزقبل بھي ماڑي پورروڈ پراطراف ميں رہنے والوں نے پاني و بجلي کي بندش کے خلاف احتجاج کيا تھا۔


مظاہرين سے ضلعي انتظاميہ نے مذاکرات کيئے تھے اور پھر يقين دہاني کي لالي پاپ تھمادي گئي تھي۔


کراچي ميں پاني کے بحران پر کيا سڑک بند کرکے احتجاج کرنا ہي واحد حل رہ گيا ہے، اس کے لئے شہري حکومت، سندھ حکومت اور وفاقي حکومت کو سنجيدگي سے سوچنا ہوگا۔


 
 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں