Monday, September 21, 2020  | 2 Safar, 1442
ہوم   > Latest

سانپ کی کھال سے چپل بنانے پر 50 ہزار جرمانہ عائد

SAMAA | - Posted: Jun 3, 2019 | Last Updated: 1 year ago
SAMAA |
Posted: Jun 3, 2019 | Last Updated: 1 year ago

وزیراعظم عمران خان کے لئے اژدھے کی کھال سے چپل تیار کرنے پر محکمہ وائلڈ لائف نے پشاور کے معروف چپل میکر کو پچاس ہزار روپے جرمانہ کردیا۔

گزشتہ ہفتے برطانوی نشریاتی ادارے نے اپنی رپورٹ میں کہا تھا کہ وزیرِ اعظم عمران خان کے لیے ’کپتان چپل‘ بنانے والے نور الدین چاچا اس مرتبہ ان کے لیے سانپ کی کھال سے خاص چپل تیار کر رہے ہیں جو وزیراعظم کو عید پر تحفہ کے طور پر دی جائے گی۔

نور الدین چاچا نے بتایا تھا کہ اس مرتبہ عمران خان کے ایک چاہنے والے نعمان نامی شخص نے ان سے کہا ہے کہ وہ اپنے کپتان کو خاص قسم کا تحفہ دینا چاہتے ہیں۔ اس مقصد کے لیے نعمان نے امریکا سے سانپ کی انتہائی خوبصورت کھال بھجوائی ہے۔

اس رپورٹ کے بعد خیبر پختونخوا کا محکمہ وائلڈ لائف حرکت میں آگیا اور اس نے وائلڈ لائف ایکٹ کی خلاف ورزی پر اتوار کو چاچا نورالدین کی دکان پر چھاپہ مار کر سانپ کی کھال سے بنی چپل برآمد کرلی جبکہ دکان سے ایک کاریگر کو بھی گرفتار کرلیا۔

یہ بھی پڑھیں: کپتان چپل بنانے والے چچا نورالدین کی دکان پر چھاپہ، کاریگر گرفتار

پیر کو حکام نے چاچا نورالدین پر 50 ہزار روپے جرمانہ عائد کرکے کاریگر کو رہا کردیا۔ وائلڈ لائف حکام کا کہنا ہے کہ ملزمان نے بغیر لائسنس سانپ کی کھال درآمد کی اور اس کی چپل بناکر فروخت کرنے کی کوشش کی۔

وائلڈ لائف ایکٹ کے تحت سانپ کی کھال کے کاروبار، سپلائی اور استعمال کیلئے لائسنس کا حصول لازمی ہے۔ لائسنس کے بغیر اس کے کاروبار میں ملوث افراد کو زیادہ سے زیادہ 2 سال قید اور 44 ہزار روپے جرمانہ ہوسکتا ہے جبکہ کم از کم سزا ایک ہفتہ قید، 5 ہزار روپے جرمانہ اور کھال کی مالیت ادا کرنا ہوگی۔ کھال کی مالیت اگر مجرم ادا نہ کرسکے تو مزید ایک ہفتہ قید کی سزا ہوگی۔

وائلڈ لائف پشاور کے حکام کا کہنا ہے کہ چاچا نورالدین کی دکان سے برآمد ہونے والی کھال ایناکونڈا نسل کے اژدھا کی ہے مگر دکاندار کے پاس بیرون ممالک سے کھال درآمد کرنے کی کوئی دستاویزات نہیں ہے اور نہ ہی اس کے پاس لائسنس ہے جس پر وائلڈ لائف ایکٹ کے سیکشن 9، 11، 14، 18 کے دفعات لگائے گئے ہیں۔

اس کے ساتھ ہی دکاندار کو خبردار کیا گیا اور اسٹامپ پیپر پر ان سے لکھ کر لیا گیا کہ مستقل میں جنگلی حیات کی کھال سے غیر قانونی طور چپل نہیں بنائے گا۔ اگر جنگلی حیات کی کھال ان کے دکان سے برآمد ہوئی تو سخت کارروائی سمیت بھاری جرمانہ عائد کیا جائے گا۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube