Saturday, September 26, 2020  | 7 Safar, 1442
ہوم   > پاکستان

سنگین غداری کیس میں پرویز مشرف کو ایک بار پھر ریلیف مل گیا

SAMAA | - Posted: May 2, 2019 | Last Updated: 1 year ago
Posted: May 2, 2019 | Last Updated: 1 year ago

سنگین غداری کیس میں پرویز مشرف کو ایک بار پھر ریلیف مل گیا، سماعت ملتوی کرنے کی درخواست منظور جبکہ استغاثہ کا اعتراض مسترد کردیا گیا، وکیل صفائی سلمان صفدر نے مؤقف اپنایا کہ مشرف بات کرنے کے قابل بھی نہیں،عدم پیشی پر معذرت بھی کرلی۔

سنگین غداری کیس میں پیشی سے پہلے مشرف کی طبیعت پھر بگڑ گئی، خصوصی عدالت نے سابق صدر کی کیس کے التواء کی درخواست منظور کرلی۔

خصوصی عدالت میں سنگین غداری کیس کی سماعت کے دوران جسٹس طاہرہ صفدر نے استفسار کیا کہ پرویزمشرف کہاں ہیں؟آج 342 کا بیان ریکارڈ کرنا ہے؟ سابق صدر کی عدم پیشی پر ملزم کے وکیل سلمان صفدر نے شرمندگی کا اظہار کیا۔

انہوں نے کہا مشرف کو کل پاکستان پہنچنا تھا لیکن ناساز طبیعت کے باعث سفر نہیں کرسکتے، یہ بھی بتایا کہ تین دن سابق صدرکے پاس رہا وہ بات کرنے کے قابل بھی نہیں ہیں۔

وکیل صفائی نے کیس ملتوی کرنے اور مشرف کو پیش ہونے کیلئے ایک اور موقع دینے کی استدعا کی، دلائل دیئے کہ مشرف کے خلاف مقدمہ 2007 کا ہے، وہ پاکستان میں رہے لیکن استغاثہ کیس ثابت نہ کر سکا، سرکاری پراسیکیوٹر نے درخواست کی مخالفت کرتے ہوئے کہا سپریم کورٹ کے حکم میں واضح ہے مزید التواء نہیں ہوگا۔

جسٹس شاہد کریم نے ریمارکس دیئے سپریم کورٹ نے کہیں نہیں کہا ہمیں التواء دینے کا اختیار نہیں، عدالت نے سابق صدر کی درخواستِ بریت پر بھی وفاق کو نوٹس جاری کردیا۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube