Tuesday, November 24, 2020  | 7 Rabiulakhir, 1442
ہوم   > Latest

قتل کے الزام میں 10 سال سے قید ملزم عدم شواہد پر بری

SAMAA | - Posted: Apr 22, 2019 | Last Updated: 2 years ago
Posted: Apr 22, 2019 | Last Updated: 2 years ago

سپریم کورٹ نے قتل کے الزام میں 10 سال سے قید ملزم کو عدم شواہد پر بری کردیا، چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیئے گواہی لینا تو اللہ کا بھی اصول ہے، خدا سب کچھ جانتے ہوئے بھی روز قیامت آنکھ منہ اور ہاتھ پاؤں سے گواہی لے گا۔ قتل کے ملزم کی...

سپریم کورٹ نے قتل کے الزام میں 10 سال سے قید ملزم کو عدم شواہد پر بری کردیا، چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیئے گواہی لینا تو اللہ کا بھی اصول ہے، خدا سب کچھ جانتے ہوئے بھی روز قیامت آنکھ منہ اور ہاتھ پاؤں سے گواہی لے گا۔

قتل کے ملزم کی سزا کیخلاف اپیل کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ ہر مقدمے میں سپریم کورٹ کو ہی کہنا پڑتا ہے کہ گواہی قابل قبول نہیں، کوشش کر رہے ہیں کہ نظام درست ہو جائے۔

سپریم کورٹ میں قتل کے مجرم کی اپیل پر سماعت کے دوران جسٹس آصف سعید کھوسہ کا کہنا تھا کہ گواہی لینے کا نظام تو اللہ تعالیٰ کا بھی ہے، اللہ تعالی سب کچھ جاننے کے باوجود روز قیامت گواہیاں طلب کریں گے، آنکھ، منہ، ہاتھ پاؤں سب گواہی دیں گے۔

چیف جسٹس نے استفسار کیا وقوعہ کا ایک گواہ غضنفر پٹواری 20 سال سے لاہور میں تعینات ہے، وہ شیخوپورہ میں واقعے کا گواہ کیسے بن سکتا ہے۔ اگرپٹواری لیول کا افسر بے ایمان گواہ نکل آئے تو نظام کا کیا ہوگا؟۔

عدالت نے قرار دیا کہ استغاثہ شک سے بالاتر شواہد پیش نہیں کرسکی، ملزم کو عدم شواہد کی بنا پر بری کیا جاتا ہے، ملزم شاہد حمید پر 2009ء میں شیخوپورہ میں عثمان نامی شخص کو قتل کرنے کا الزام تھا، ٹرائل کورٹ نے ملزم کو سزائےموت سنائی تھی، جسے لاہور ہائیکورٹ نے عمر قید میں تبدیل کردیا تھا۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube