Friday, September 18, 2020  | 29 Muharram, 1442
ہوم   > Latest

دریائے سندھ میں کھانا پکانے والی کشتی

SAMAA | - Posted: Apr 11, 2019 | Last Updated: 1 year ago
Posted: Apr 11, 2019 | Last Updated: 1 year ago

جب آپ مسلسل 5 دن کیلئے کشتی کے سفر پر کسی دریا میں جائیں اور مقصد ڈولفن کی تعداد کو گننا ہو تو خیال رکھیں کہ آپ کے پاس کشتی میں کھانے پکانے کی جگہ اور تمام اشیاء موجود ہوں۔ 

عبدالجبار سومرو سندھ وائلڈ لائف ڈیپارٹمنٹ کے رکن اور شیف بھی ہیں۔ گزشتہ 20 سال سے عبدالجبار اپنے ڈیپارٹمنٹ کے مہمانوں کےلیے کھانا بنا رہے ہیں جو کشتی پر سفر کرنے آتے ہیں۔

اپریل 8 سے 14 تاریخ تک عبدالجبار سومرو کے محکمہ نے دریا سندھ میں موجود ڈولفن کی آبادی پر سروے کیلئے ماہرین کو مدعو کیا تھا۔ اس سروے کو گڈو اور سکھر بیراج کے درمیان منعقد کیا گیا، جس میں دریائے سندھ  میں موجود نابینا ڈولفن کی تعداد سے آگاہ کرنا تھا۔

مہمانوں کے کھانے کیلئے سومرو نے کشتی کے کچن میں کھانا پکایا اور وہیں مہمانوں کو پیش کیا۔ انہوں نے مہمانوں کو کھانے میں دریا کی مچھلی، دال، چاول، مرغی اور بھنڈی پیش کی۔ کشتی میں کھانا پکانے کےلئے ہر قسم کا سامان موجود تھا جس میں سلنڈر گیس اور چولہا شامل ہے۔

پروگرام کے میزبان سندھ وائلڈ لائف ڈیپارٹمنٹ کے افسر میر اختر حسین تالپور تھے جنہوں نے مہمانوں کےلیے چائے، ظہرانہ اور عشائیہ کا اہتمام بھی کشتی کے کچن سے ہی کیا۔

سروے کیلئے کراچی سے گئے وائلڈ لائف فوٹو گرافر محمد خاور خان نے سومرو کے ہاتھ سے بنے دال چاول کو بہت پسند کیا۔

شاہ عبداللطیف یونیورسٹی کی زولوجسٹ ڈاکٹر زیب انساء میمن نے کہا کہ عام طور پر لوگ ڈولفن کو مچھلی سمجھتے ہیں جبکہ وہ پانی کا ممالیہ ہے، اس شعور کو مزید اجاگر کرنے کی ضرورت ہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube