کیا تحریک انصاف نے پیپلز پارٹی کی تصویر چرائی ہے؟

February 10, 2019

بختاور بھٹو زرداری نے ٹوئٹر پر دو تصاویر شیئر کی ہیں جس نے سوشل میڈیا پر نئی بحث چھیڑ دی ہے کہ پیپلز پارٹی نے تحریک انصاف کی تصویر چرائی ہے یا پھر تحریک انصاف نے پیپلز پارٹی کی تصویر چوری کی ہے۔

اس ٹوئٹ میں دو تصاویر ہیں۔ پہلی تصویر میں نظر آنی والی خاتون نے بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کارڈ ہاتھ میں پکڑا ہے جبکہ دوسری تصویر میں بھی خاتون وہی ہیں مگر اس نے ہاتھ میں صحت انصاف کارڈ تھاما ہے۔ دلچسپ امر یہ ہے کہ صحت انصاف کارڈ والی تصویر کو وفاقی حکومت نے اشتہار کے طور پر  اخبارات میں شائع کروایا ہے۔

حیرت انگیز طور پر دونوں تصاویر ہر لحاظ سے ایک جیسی ہیں۔ ان میں ذرہ برابر فرق نہیں، بس اگر فرق ہے تو یہی کہ کارڈز مختلف ہیں۔

جس ٹوئٹ کی ہم بات کر رہے ہیں وہ فتح نامی ٹوئٹر صارف کا ہے۔ اس نے صحت انصاف کارڈ والی تصویر کو ’فوٹو شاپ‘ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ بینظیر انکم سپورٹ پروگرام بہت پہلے لانچ ہوا تھا اور ساتھ ہی یہ بھی لکھا کہ یہ فوٹو شاپ فیصل جاوید کی کمپنی نے کیا ہے۔

 

بختاور نے اس ٹوئٹ کو ری ٹوئٹ کرتے ہوئے اس پر لکھا ہے کہ ’’تحریک انصاف کی حکومت صرف انڈے ڈلیور کر رہی ہے اور وہ بھی سارے سڑے ہوئے‘‘۔

ٹوئٹر صارفین کنفیوز ہیں کہ کون سی تصویر جعلی ہے اور کون سی اصلی۔ اکثریت کی رائے یہی کہ صحت انصاف کارڈ والی تصویر فوٹو شاپ ہے۔ بعض کا کہنا ہے کہ بینظیر انکم سپورٹ پروگرام والی تصویر فوٹوشاپ ہے مگر بعض صارفین نے دونوں کو فوٹو شاپ قرار دیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: برف میں مخالفین کے ساتھ تصویریں بنانے کا آئیڈیا کس کا تھا؟

کون سی تصویر اصلی ہے اور کون سی جعلی، یہ فیصلہ ہم بھی قارئین پر ہی چھوڑ دیتے ہیں کیوں کہ ہمارے پاس اس وقت تصاویر کا فارنزک معائنہ کرنے کا نظام موجود نہیں ہے البتہ ہمارا گمان یہی ہے کہ اصلی تصویر بینظیر انکم سپورٹ پروگرام والی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: یہاں تصویر لگانا سخت منع ہے

بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کا آغاز جولائی 2008 میں پیپلز پارٹی کی حکومت نے کیا تھا جس کا مقصد یہ بتایا گیا کہ خواتین کو غربت کی لکیر سے اوپر لانے اور ان کو اپنے پیروں پر کھڑا کرنے میں مدد ملے گی۔

دوسری جانب تحریک انصاف نے فروری 2018 میں صحت انصاف کارڈ جاری کیا جس کی مدد سے نادار اور مستحق افراد کا مفت علاج ممکن ہوسکے گا۔