Thursday, October 1, 2020  | 12 Safar, 1442
ہوم   > Latest

خیرپور: نامعلوم افراد نے ہندوؤں کے مقدس اوراق جلادیے، علاقے میں کشیدگی

SAMAA | and - Posted: Feb 4, 2019 | Last Updated: 2 years ago
Posted: Feb 4, 2019 | Last Updated: 2 years ago

سندھ کے ضلع خیرپور میں نامعلوم افراد نے مندر کے اندر داخل ہوکر ہندوؤں کے مقدس اوراق کو آگ لگادی جس کے بعد علاقے میں کشیدگی پھیل گئی ہے۔

واقعہ اتوار کے روز سندر شیوا منڈلی مندر میں پیش آیا جو خیرپور کے ہندو اکثریتی علاقے کنبھ میں واقع ہے اور اس کے اطراف میں ہندو کمیونٹی کے 60 سے 70 گھرانے آباد ہیں۔

مقامی ہندوؤں کے مطابق شام 6 بجے سے 6 بجکر 15 منٹ کے درمیان نامعلوم ملزمان مندر میں داخل ہوئے اور بعض مقدس اوراق کو نذر آتش کیا جن میں بھگوت گیتا اور گروگرنتھ صاحب سمیت مورتی بھی شامل تھے۔

نامعلوم ملزمان نے صرف کتابوں اور مورتیوں کو ہی آگ لگائی جس سے بظاہر لگتا ہے کہ ان کا مقصد پورے مندر کو نذر آتش کرنا نہیں تھا، ملزمان واردات کے فوری بعد فرار ہوگئے۔

اطلاعات کے مطابق مقامی ہندوؤں نے ناملوم ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کرنے کیلئے پولیس کو درخواست دی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: ہندوؤں میں ذات پات کے نظام پرسندھی اسکالرکی دلچسپ تحقیق

کنبھ کا علاقہ خیرپور کے مرکزی بازار سے تقریباً 28 کلومیٹر مسافت پر واقع ہے اور کوٹ ڈیجی تعلقہ کی حدود میں آتا ہے۔

مقامی ہندو گرنو مل نے سماء کو بتایا کہ نامعلوم ملزمان نے تمام کارروائی صرف 15 منٹ میں کی ہے کیوں کہ 6 بجے خواتین پوجا کرکے چلی جاتی ہیں اور 6 بج کر 15 منٹ پر مندر میں بچے پڑھنے آتے ہیں۔ گزشتہ روز جب خواتین کے جانے کے بعد بچے مندر میں آئے تو انہوں نے آگ دیکھی اور بڑوں کو آگاہ کیا۔

متاثرہ مندر کی دیکھ بھال کیلئے کوئی موجود نہیں ہوتا کیوں کہ مندر کے اردگرد ہندو آباد ہیں اور ان کا ہر وقت مندر میں آنا جانا لگا رہتا ہے۔ لوگوں کی زیادہ آمدورفت کے باعث دروازے پر تالا بھی نہیں لگایا جاتا۔ واقعہ کو دو دن گزرنے کے باجود کوئی بھی ملزمان کی شناخت نہ کرسکا۔

مقامی ہندو برادری کا کہنا ہے کہ یہ واقعہ ان کیلئے حیران کن ہے کیوں کہ وہ چین سے یہاں رہ رہے ہیں، آج تک کسی نے کسی قسم کی دھمکی دی اور نہ ہی کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش آیا۔

یہ بھی پڑھیں: ہندوبرادری کی زمین پرقبضہ:خورشید شاہ سمیت 46 قابضین کونوٹس

خیرپور میں رہائش پذیر زیادہ تر ہندو تجارت پیشہ ہیں، پیر کو تمام ہندوؤں نے اپنے کاروبار بند کرکے احتجاج کیا۔ انہوں نے مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ دوسرے مذاہب کے لوگوں نے ان کے احتجاج میں شرکت نہیں کی، حالانکہ وہ برسوں سے ایک ساتھ رہ رہے ہیں۔

دوسرے شہروں کے ہندو تاجر اور جیکب آباد کے سکھ مقامی ہندو کمیونٹی سے اظہار یکجتی کیلئے کنبھ پہنچے۔

خیرپور میں سندھی، بلوچ، پنجابی اور پختون سمیت تمام زبانیں بولنے والے آباد ہیں مگر مذہب کے لحاظ سے زیادہ تر مسلمان ہیں۔

ہندوؤں کے احتجاج میں اپنے چند دوستوں کے ہمراہ شریک ہونے والے کنبھ کے مسلمان رہائشی شفیق وسان نے کہا کہ اس واقعہ نے سب کو چونکا دیا ہے، پہلے یہاں کبھی اس طرح کے واقعات نہیں ہوئے۔

اس خبر کا انگریزی ورژن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube