ایل این جی اسکینڈل، سپریم کورٹ نے انکوائری رپورٹ اور معاہدے کی نقل طلب کرلی

Zulqarnain Iqbal
September 11, 2018

ایل این جی اسکینڈل کیس کی عدالت عظمیٰ میں سماعت ہوئی، نیب کو معاملے میں گڑ بڑ نظر آنے لگی، سپریم کورٹ نے انکوائری رپورٹ کیساتھ معاہدے کی سر بمہر نقل بھی مانگ لی، عدالت نے تفتیشی افسران کی تھپڑ گردی کا بھی سخت نوٹس لے لیا۔

ایل این جی اسکینڈل کیس میں سپریم کورٹ نے نیب کو انکوائری جلد مکمل کرنے کی ہدایت کردی، انکوائری رپورٹ کے ساتھ ایل این جی معاہدے کی سربمہر نقل بھی فراہم کرنے کا حکم دے دیا۔

پراسیکیوٹر جنرل نیب نے عدالت میں انکشاف کیا کہ اسکینڈل کا 80 فیصد ریکارڈ حاصل کرلیا، بادی النظر میں ساری گڑ بڑ ٹھیکوں میں ہوئی۔

دوران سماعت چیف جسٹس ثاقب نثار کی ہدایت پر ڈائریکٹر انسانی حقوق سیل نے بتایا کہ کل ایک درخواست گزار نے زار و قطار روتے ہوئے کہا نیب کی تفتیش سے بہتر ہے مر جاؤں، نیب والے گھنٹوں انتظار کروا کر ناصرف تھپڑ مارتے ہیں بلکہ جیل کی دھمکیاں بھی دیتے ہیں۔

نیب رویے پر چیف جسٹس نے سخت برہمی کا اظہار کیا، کہا نیب کا تشخص بچانے کیلئے تھپڑ مارنے کی اجازت نہیں دے سکتے، تھپڑ مارنے والے تفتیشی افسر کو بھی طلب کر لیا۔ بولے کہ الزام ثابت ہوا تو سخت کارروائی ہوگی، نیب اپنا کام ضرور کرے لیکن کسی کی تذلیل برداشت نہیں کی جائے گی۔

نیب پراسیکیوٹر نے بھی عدالت میں صاف کہہ دیا ایسے کسی افسر کا دفاع نہیں کیا جائے گا۔