زائرین کو سہولیات ،تحریک عدم اعتماد ،تحفظات

September 11, 2018

جام کمال کی وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی سے ملاقات،زائرین کو سہولیات کی فراہمی پر اتفاق

روزنامہ ایکسپریس

وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان سے ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی قاسم خان سوری اوروزیرمملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی نے پیر کے روز بلوچستان ہاؤس میں ملاقات کی، ملاقات کے دوران وزیرمملکت برائے داخلہ کے حالیہ دور ہ تفتا ن اور اس کے تناظر میں زائرین کی سیکیورٹی اور انہیں سہولیات کی فراہمی کے حوالے سے اقداما ت کا جائزہ لیا گیا۔ وزیر مملکت برائے داخلہ نے اپنے دورہ تفتان کے دوران صورتحال کا جائزہ لینے کے بعد اس کی بہتری کے لئے متعلقہ وفاقی اداروں کودی جانے والے ہدایات اور پیشرفت سے آگاہ کیا، ملاقات میں اس امر پر اتفاق کیا گیا کہ کوئٹہ میں وزیراعلیٰ بلوچستان کی زیرصدارت منعقدہ اجلاس میں طے پائے جانے والے امور پر عملدرآمد کرتے ہوئے وفاقی اور صوبائی حکومت کے متعلقہ ادارے زائرین کے لئے سہولتوں میں اضافے اور زائرین کی ایران آمدورفت کو باقاعدہ بنانے کے لئے اقدامات کریں گے اور اس حوالے سے ان اداروں کے مابین مربوط روابط کو مستحکم کیا جائے گا۔ ملاقات میں بلوچستان عوامی پارٹی اور پی ٹی آئی کے مابین سیاسی رابطوں کے فروغ اور وفاقی اور صوبائی حکومت کے باہمی تعلقات کو مزید وسعت دینے پر بھی اتفاق کیا گیا۔ پی ٹی آئی کے رہنماؤں نے یقین دلایا کہ وفاقی حکومت بلوچستان کے مسائل کے ترحیجی بنیادوں پر حل کے لئے وزیراعلیٰ جام کمال خان کی قیادت میں قائم صوبائی حکومت کی بھرپور معاونت کرے گی۔

 بلوچستان میں تحریک عدم اعتماد لائیں گے نہ اپوزیشن بینچوں پر بیٹھیں گے،پی ٹی آئی بلوچستان

روزنامہ انتخاب

پاکستان تحریک انصاف بلوچستان کے صوبائی ترجمان بابر یوسفزئی نے پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے تحریک عدم اعتماد لانے ، آزاد بینچوں پر بیٹھنے کی خبروں کی تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان افواہوں میں کوئی صداقت نہیں بلوچستان عوامی پارٹی صوبے میں ہماری اتحادی جماعت ہے لہذا ایسی خبریں یا بیان چلانے سے پہلے تصدیق کرلیا کریں،ان کا مزید کہنا تھا کہ سردار یار محمد رند کی وزیر اعظم عمران خان سے ملاقات ہوئی ہے جس میں وزیر اعظم نے جلد دورہ بلوچستان کی دعوت قبول کر لی ہے۔

سی پیک سمیت کسی میگا پراجیکٹ کے خلاف نہیں،تحفظات دور کئے جائیں،بی این پی مینگل

روزنامہ آزادی

بلوچستان نیشنل پارٹی کےمرکزی سیکر ٹری اطلاعات آغا حسن بلوچ نے کہا ہے کہ سابقہ حکمرانوں نے بلوچستان کو یکسر نظر انداز کیا جس سے محرومی کا پھیلنا فطری عمل تھا،ان کا کہنا تھا کہ سی پیک میں بلوچستان کے لیے کچھ نہیں رکھا گیا بلوچستان کے ساتھ بہت زیادتیاں کی گئیں مگر اب انھیں برداشت نہیں کیا جائے گا،ان کا مزید کہنا تھا کہ ہم سی پیک سمیت کسی میگا پراجیکٹ کے خلاف نہیں،ہمارے اس حوالے سے کچھ تحفظات ہیں جنہیں دور کیا جائے۔

 

صدر مملکت عارف علوی سے قائم مقام گورنر بلوچستان میر عبدالقدوس بزنجو کی ملاقات صوبے کی سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال

روزنامہ ایگل

میر عبدالقدوس بزنجو نے کہاہے کہ وزیراعلیٰ بلوچستان میر جام کمال کی قیادت میں بننے والی بلوچستان حکومت بہتر انداز میں عوام کی خدمت کررہی ہے ،بلوچستان کی احساس محرومی اور عوام کے مسائل کو حل کرنا حکومت کا مشن ہے ،وفاق سے مطالبہ کیاہے کہ نئے این ایف سی ایوارڈ کا جلد ازجلد اعلان کرکے صوبے میں پائی جانے والی محرومیوں کو فوری طور پر ختم کیاجائے گزشتہ روز صدرمملکت ڈاکٹرعارف الرحمن علوی سے قائم مقام گورنر میر عبدالقدوس بزنجو نے ملاقات کی طویل ملاقات میں سیاسی اور حکومتی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیاملاقات کے بعد بات چیت کرتے ہوئے قائم مقام گورنربلوچستان کاکہناتھاکہ موجودہ صوبائی اور وفاقی حکومتیں عوامی مینڈیٹ حاصل ہونے کے بعد قائم ہوئی ہے ،بلوچستان میں جام کمال کی قیادت میں بننے والی صوبائی حکومت پر نہ صرف پارلیمانی سیاسی جماعتوں کا اعتماد ہے بلکہ عوام کا بھی بھرپور اعتماد حاصل ہے ،انہوں نے کہاکہ اس قسم کا تاثر پیدا کرناکہ بلوچستان میں حکومت میں اختلافات ہیں سراسر بے بنیاد اور ان لوگوں کا پروپیگنڈہ ہے جن کو عوام نے مسترد کردیا ،انہوں نے کہاکہ وزیراعلیٰ بلوچستان کی قیادت میں حکومت بہتر انداز میں کام کررہی ہے اور آئندہ چند دنوں میں ہی ان کے ثمرات آنا شروع ہونگے۔