نوازشریف اورمریم کوائرپورٹ سے ہی گرفتارکرنے کافیصلہ

Samaa Web Desk
July 12, 2018

نگراں حکومت نے نواز شریف اور مریم نواز کولندن سے وطن واپسی پر لاہورائرپورٹ سے ہی گرفتار کرنے کا فیصلہ کرلیا۔ وزیراطلاعات کہتے ہیں یہ نہیں ہوسکتا کہ دونوں کو لاہور میں پھرنے دیں۔ پنجاب حکومت اور انتظامیہ امن و امان کا مسئلہ پیدا نہیں ہونے دے گی۔

ایون فیلڈ ریفرنس میں سزا یافتہ سابق وزیراعظم نواز شریف اور مریم نواز کو وطن واپسی پر ائر پورٹ سے ہی گرفتار کر لیا جائے گا۔ نگران وزیر اطلاعات علی ظفر نے سماء سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ نواز شریف اور مریم کے خلاف عدالتی فیصلہ آیا ہے تو انہیں گرفتار کیا جائے گا۔سزا یافتہ کو گرفتارکرنا فرض ہے، ایسا نہیں ہو سکتا کہ انہیں لاہور میں پھرنے دیا جائے۔

وزیراطلاعات نے مزید کہا کہ امن و امان کا مسئلہ پیدا نہیں ہونے دیں گے۔ نیب کو سہولت ملےگی کہ سب کچھ باعزت طریقے سے ہو۔

علی ظفر نے یہ بھی واضح کیا کہ یہ کہنا غلط ہے کہ مخصوص لوگوں کا احتساب ہو رہا ہے، نواز شریف اور مریم کو فیصلے کے خلاف اپیل کا حق حاصل ہے۔

واضح رہے کہ احتساب عدالت 28 جولائی 2017 کے سپریم کورٹ پاناما کیس کے فیصلے کے تحت نواز خاندان کیخلاف تین ریفرنسز کی سماعت کر رہی ہے جن میں سے ایک ایون فیلڈ ریفرنس (لندن فلیٹس) کا فیصلہ 6 جولائی کو سنایا جا چکا ہے۔ فیصلے کے تحت نواز شریف کو 10 سال اور مریم نواز کو 7 سال قید بامشقت کی سزا سنائی گئی ہے جبکہ کیپٹن صفدر کو ایک سال کی سزا سنائی گئی اور وہ اس وقت اڈیالہ جیل میں قید ہیں۔

احتساب عدالت کے فیصلے کے بعد نواز شریف اور مریم نے لندن سے وطن واپسی کا فیصلہ کیا اور وہ کل شام 8 بجے لاہور ائر پورٹ پر لینڈ کریں گے۔