الیکشن کمیشن کا کردار منصفانہ ہونا چاہئے، سراج الحق

July 11, 2018

امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے کہا ہے کہ متحدہ مجلس عمل ایک نظریاتی کارواں ہے۔ متحدہ مجلس عمل خاندانوں کا نہیں، اسلام کا نفاذ چاہتی ہے۔

سیالکوٹ میں متحدہ مجلس عمل کی انتخابی مہم کے دوران کارکنوں سے خطاب کرتے ہوئے انکا کہنا تھا متحدہ مجلس عمل میں کوئی پانامہ کا بیمار شامل نہیں۔ ایسی حکومت چاہتے ہیں جہاں رات کے وقت حکمران سر بسجود ہوں۔

سراج الحق کے مطابق، پچیس جولائی کو دین اور لادینت کے درمیان مقابلہ ہے۔ دنیا چاہتی ہے پاکستان میں ایسی حکومت ہو جو امریکہ کی غلام ہو۔

امیر جماعت اسلامی نے کہا کہ پاکستان ایک فلسفے کا نام ہے جس کی بنیاد اسلامی افکار پر رکھی گئی۔

مخالفوں پر تنقید کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ان سانپوں کے منہ میں دودھ ڈالنے کی بجائے انہیں جیل کے راستے پر بجھوائیں۔ اس ملک پر ستر سال سے جاگیر داروں اور وڈیروں نے حکومت کی ۔

سراج الحق نے کہا کہ الیکشن کمیشن کا کردار غیر جانبدرانہ اور منصفانہ ہونا چاہئے۔

ان کے مطابق، ہم چاہتے ہیں اس ملک میں نوجوانوں کو روز گار مہیا ہو۔ صحت اور تعلیم کی سہولیات بلا تفریق مہیا ہوں۔ متحدہ مجلس عمل کو موقع ملا تو قوم کی بیٹی عافیہ صدیقی کو ملک میں واپس لانے کا اہتمام کریں گے۔