Friday, January 28, 2022  | 24 Jamadilakhir, 1443

پاکستانی قونصل جنرل کی امریکی جیل میں ڈاکٹرعافیہ سے ملاقات

SAMAA | - Posted: May 24, 2018 | Last Updated: 4 years ago
SAMAA |
Posted: May 24, 2018 | Last Updated: 4 years ago

امریکا میں قید پاکستانی سائنسدان ڈاکٹرعافیہ صدیقی سے متعلق تمام افواہیں بےبنیاد نکلیں، ہیوسٹن میں پاکستانی قونصلر نے عافیہ کے زندہ ہونے کی تصدیق کردی۔

پاکستانی قونصل جنرل عائشہ فاروقی نے ایف ایم سی کارزویل جیل میں ڈاکٹر عافیہ سے دوگھنٹے تک ملاقات کی۔ یہ گذشتہ چودہ ماہ کے دوران ہونے والی چوتھی ملاقات تھی۔

ترجمان پاکستان قونصلیٹ کے مطابق عائشہ فاروقی اور ڈاکٹر عافیہ صدیقی کی ملاقات دو گھنٹے تک جاری رہی۔ملاقات کے بعد جاري اعلاميہ ميں ڈاکٹر عافیہ سے متعلق گردش کرنے والی تمام افواہوں کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے کہا گیا کہ عافيہ صديقي سے قونصل جنرل نے تفصیلی ملاقات کی ہے، وہ خیریت سے ہیں۔

اس ملاقات سے سوشل ميڈيا پرچلنے والي وہ تمام افواہيں دم توڑ گئيں جن ميں کہا گيا تھا کہ عافيہ صديقي کا امريکی جيل ميں انتقال ہوگيا ہے ۔

اہلخانہ کا موقف

اس حوالے سے ڈاکٹر عافیہ کی بہن ڈاکٹر فوزیہ کا کہنا تھا کہ وہ ایسی کسی افسوسناک خبر کی تصدیق نہیں کرسکتی ہیں کیونکہ حکومت اورجیل حکام کی جانب سے انہیں اس حوالے سے آگاہ نہیں کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ 2 سال سے ہزارہا کوشش کے باوجود عافیہ سے کوئی رابطہ نہیں ہوسکا۔ آن لائن قیدیوں کے اسٹیٹس میں عافیہ کا اسٹیٹس زندہ لکھا ہے، اگر کسی قیدی کا اسٹیٹس بدلا جائے تو فیملی کو بھی آگاہ کیا جاتا ہے۔

پس منظر

پاکستان خاتون سائنسدان ڈاکٹر عافیہ صدیقی پرافغانستان میں امریکی فوجیوں پر حملے کا الزام ہے۔نائن الیون حملوں کے مبینہ ماسٹر القاعدہ کمانڈر خالد شیخ محمد کی گرفتاری کے بعدعافیہ صدیقی دو ہزار تین میں کراچی سے اپنے تین بچوں کے ہمراہ لاپتہ ہو گئی تھیں۔

گمشدگی کے پانچ سال بعد امریکا نے ڈاکٹرعافیہ کو افغان صوبے غزنی سے گرفتار کرنے کا دعویٰ کیا۔ امریکی حکام کی جانب سے دعویٰ کیا گیا کہ ان سے برآمد ہونے والی کیمیائی ہتھیاروں سے متعلق دستاویزات اور دیگر اشیا سے ظاہر ہوتا ہے کہ وہ امریکی فوجیوں پر حملے کی منصوبہ بندی کر رہی تھیں۔

عافیہ صدیقی کو امریکا منتقل کرنے کے بعد ان پر مقدمہ چلایا گیا اور سال دوہزار دس میں اقدام قتل کی فردجرم عائد کرتے ہوئے انہیں 86 برس قید کی سزا سنائی گئی۔

یہ فرد جرم اس تناظر میں عائد کی گئی جب امریکی فوجی اور ایف بی آئی افسران کی پوچھ گچھ کے دوران عافیہ صدیقی نے نے مبینہ طور پر ایک رائفل سے ان پر فائرنگ کی لیکن جوابی فائرنگ میں وہ خود زخمی ہوئی تھیں۔

یہ خبرانگریزی میں پڑھنے کیلئے یہاں کلک کریں

 

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube