کیا کے الیکٹرک کیخلاف مقدمہ درج کرانے کا حکم دےدیں؟چیف جسٹس

May 12, 2018

کراچی میں اعلانیہ اور غیراعلانیہ طویل لوڈشیڈنگ پر چیف جسٹ نے سپریم کورٹ رجسٹری میں کے الیکٹرک حکام کی سرزنش کردی۔ ریمارکس دیے کہ کیا نجکاری کا مطلب یہ ہے کہ کراچی کے لوگوں کو جہنم میں ڈال دیں۔

چیف جسٹس کراچی میں بدترین لوڈشیڈنگ پربرہم ہوگئے۔ سپریم کورٹ رجسٹری میں کراچی میں بجلی کی لوڈ شیڈنگ سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران کےالیکٹرک کےوکیل پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے چیف جسٹس نے کہا کہ کراچی کےلوگ تباہ ہوگئے،بجلی دینا آپ کا کام نہیں؟۔ چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ آپ کو کس نے لوڈ شیڈنگ کی اجازت دی؟یہ تومجرمانہ غفلت ہے،کیا آپ کےخلاف مقدمہ درج کرانےکاحکم دے دیں؟ ۔

کے الیکٹرک کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ فالٹس کی وجہ سے مسائل آتے ہیں، چیف جسٹس نے پوچھا ک ہ فالٹس کی صورت میں بیک اپ کیوں نہیں ہوتا؟رمضان شروع ہورہا ہے،اسی طرح پورا رمضان گزرجائے گا اور کراچی کے لوگ بلکتے رہیں گے۔

جسٹس ثاقب نثار نے لوڈمینجمنٹ کےنام پرغیرضروری لوڈشیڈنگ نہ کرنے کا حکم دیتے ہوئے کےالیکٹرک سے لوڈ شیڈنگ کے شیڈول سے متعلق 20 مئی تک مئی تک تفصیلی رپورٹ طلب کرلی۔