شاہ زیب قتل کیس، شاہ رخ جتوئی کو رہائی مل گئی

December 23, 2017

کراچی : پہلے سزائے موت کالعدم ہوئی پھر انسداد دہشت گردی کی دفعات مقدمے سے نکالی گئیں، اب ضمانت بھی ہوگئی، شاہ زیب قتل کیس کے پانچ سال بعد ملزم شاہ رخ جتوئی اور ساتھیوں کو ضمانت پر رہائی مل گئی۔

جیل سے آزاد مگر ضمیر کا قیدی شاہ زیب کا قاتل آزاد ہوگیا، منہ چھپا ہوا سر شرم سے جھکا ہوا ، شاہ رخ جتوئی کوجناح اسپتال سے رہا کردیا گیا، یاد رہے کہ جب سزائے موت ملی تھی تب تو فتح کا نشان بنایا تھا لیکن اب رہائی پر بھی سر جھکا ہوا ہے۔

ملزمان کی 5 سال بعد ضمانت پر رہائی ملی پہلے سزائے موت کالعدم ، پھر دہشت گردی کی دفعات نکالی گئیں، شاہ زیب کے والد نے خون بہا لیے بغیر قتل معاف کردیا۔

شاہ زیب کے والد نے ِبنا خون بہا لیے بیٹے کا قتل معاف کیا اور راضی نامہ عدالت میں جمع کرادیا۔

بھائی شاہ رخ جتوئی اشرف جتوئی کا کہنا تھا کہ ہمارے افسوس پر انہوں نے فی سبیل اللہ معاف کردیا، جو سوشل میڈیا پر چل رہا ہے وہ غلط ہے، نہ ہم نے رقم دی نہ انہوں نے مانگی۔

سزائے موت کالعدم ہوئی انسداد دہشت گردی کی دفعات مقدمے سے نکالی گئیں، اب ضمانت بھی ہوگئی، مقدمے کا فیصلہ ہونا ابھی باقی ہے۔ سماء