جنید جمشید کی آخری سیلفی کی کہانی

December 7, 2017

حویلیاں طیارہ حادثے میں معروف مذہبی اسکالر جنید جمشید کی شہادت کو آج ایک سال بیت گیا۔ جنید جمشید کا سماء سے گہرا تعلق رہا۔ شہرکی بہتری کا معاملہ ہو یا یوم آزادی پر جشن کی تقریب ، جے جے سماء کے ساتھ ساتھ رہے۔ زندگی کی آخری سیلفی بھی سماء کے پروگرام میں بنوائی۔

جنید جمشید نے اپنی زندگی میں بھرپور عروج دیکھا۔ دین کی سربلندی کا پرچم اُٹھایا تو پھر مشکلات کی کبھی پروا تک نہ کی۔

شہید نے سماء کے کئی پروگرامات کی شان بڑھائی ۔ سماء کے پروگرام ندیم ملک لائیو میں شوبز چھوڑنے پر پچھتاوے سے متعلق سوال ہوا تو جنید جمشید نے دل کی بات کہہ دی۔

جنید جمشید کا کہنا تھا کہ ندیم بھائی اپنی سابقہ زندگی چھوڑ کر اتنا خوش ہوں کہ تکلیف بھی ہوتی ہے تو اللہ دل کو سکون دیتا ہے۔ مشہور عالم نغمے دل دل پاکستان کی فرمائش پرجنید جمشید کی ہچکیاں بندھ گئیں تھیں۔

سیلفی سے تنگ جنید جمشید نے آخری سیلفی پندرہ اگست دوہزار سولہ کو سماء کی میزبان صوفیہ مرزا کےساتھ بنوائی، کہا اس کے بعد کوئی سیلفی نظر آئی تو وہ جعلی ہوگی۔یوم آزادی کی خصوصی ٹرانسمیشن میں بھی جنید جمشید سماء کے ساتھ تھے۔

جنید جمشید کے قریبی دوست سہیل خان کا کہنا ہے کہ سب کا پیاراجے جےتہجد گزار تھا اور آخری دنوں میں موت کا کثرت سے ذکر کرتے تھے۔

Email This Post
 
 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.