سپریم کورٹ نے کراچی کاماسٹرپلان طلب کرلیا

November 14, 2017

کراچی : سپریم کورٹ کے جج جسٹس گلزار احمد کراچی میں تجاوزات کیخلاف سخت برہم ہوگئے۔انھوں نےکہاکہ شہر میں سانس لینے کی بھی جگہ نہیں چھوڑی ۔سرکاری اداروں کا بس یہی کام رہ گیا ہے نالوں پر نالوں پر دکانیں بناؤ،مال کماؤ۔سپریم کورٹ نےکراچی شہر کا اصل ماسٹر پلان طلب کرلیا۔

پی ای سی ایچ ایس میں نالے پرمارکیٹیں بن گئیں۔ کےایم سی نالے کی صفائی اور حدود کے تعین کی درخواست لے کرعدالت پہنچ گئی۔ سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں اصل ماسٹر پلان پیش نہ کرنے پرعدالت سخت برہم ہوگئی۔

جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دئےکہ کراچی کو شہر کہلانے کے لائق نہیں چھوڑاگیا۔ڈائریکٹرماسٹر پلان محمد سرفراز سے سوال کیا کہ آپ کراچی کے ساتھ  کر کیا رہے ہیں؟ کیا تنخواہیں اور مراعات شہر کو ڈبونے کے لئے لے رہے ہیں؟۔

سرکاری اداروں کا کام نالوں پر دکانیں بناؤ، مال کماؤ رہ گیا ہے۔آپ لوگ کراچی کے ساتھ بے شرمی والی حرکتیں بند کریں۔ انھوں نے واضح کردیاکہ یہاں سے سیدھا جیل بھیجا جاتا ہے۔

عدالت نے کراچی کا اصل ماسٹر پلان طلب کرکے تجاوزات کے خاتمے کا حکم دے دیا۔ سماء

Email This Post
 
 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.