Thursday, September 16, 2021  | 8 Safar, 1443

پاکستان کسی کےلیےقربانی کابکرانہیں بنےگا،وزیراعظم

SAMAA | - Posted: Sep 22, 2017 | Last Updated: 4 years ago
SAMAA |
Posted: Sep 22, 2017 | Last Updated: 4 years ago

نیویارک: وزیراعظم پاکستان شاہد خاقان عباسی نے کہاہےکہ دہشتگردی سےنمٹنےکیلئےجامع حکمت عملی کی ضرورت ہے۔ سرد جنگ کے باوجود دنيا کسي بڑے تصادم کا شکار نہيں ہوئي۔مشرق اور مغرب ميں نيا تناؤ دنيا کوعدم استحکام سے دوچار کررہاہے۔ انھوں نے دعوی کیاکہ عراق اور شام ميں داعش کمزور ہوچکي ہے۔ اقوام متحدہ کے72ويں اجلاس سےوزيراعظم...

نیویارک: وزیراعظم پاکستان شاہد خاقان عباسی نے کہاہےکہ دہشتگردی سےنمٹنےکیلئےجامع حکمت عملی کی ضرورت ہے۔ سرد جنگ کے باوجود دنيا کسي بڑے تصادم کا شکار نہيں ہوئي۔مشرق اور مغرب ميں نيا تناؤ دنيا کوعدم استحکام سے دوچار کررہاہے۔ انھوں نے دعوی کیاکہ عراق اور شام ميں داعش کمزور ہوچکي ہے۔

اقوام متحدہ کے72ويں اجلاس سےوزيراعظم شاہد خاقان عباسي نے خطاب کرتےہوئے مسئلہ کشمیر اور بھارتی جارحیت کے علاوہ عالمی مسائل اور تنازعات پربات کی۔ انھوں نے فلسطین سے متعلق کہاکہ   فلسطيني مسئلے کا کوئي حل نظر نہيں آرہا۔ فلسطین میں اسرائیلی مظالم جاری ہیں۔میانمار سے متعلق وزیراعظم شاہدخاقان عباسی نے بتایاکہ ميانمار ميں روہنگيا مسلمانوں پر مظالم ڈھائے جارہے ہيں۔

انھوں نے افغانستان سے متعلق اپنے خطاب میں کہاکہ پاکستان افغان جنگ سےبری طرح متاثر ہوا۔ انھوں نے دوٹوک لہجے میں کہاکہ طالبان کي محفوظ پنا گاہيں پاکستان ميں نہيں ہيں۔ پاکستان نے بڑي تعداد ميں افغان مہاجرين کي ميزباني کي۔

وزیراعظم کاکہناتھاکہ دہشتگردی سےنمٹنےکیلئےجامع حکمت عملی کی ضرورت ہے۔افغانستان ميں جاري جنگ سے ثابت ہوا کہ جنگ سے امن کا حصول ممکن نہيں۔ وزیراعظم نے واضح کردیاکہ پاکستان کسی کیلئےقربانی کابکرا نہیں بنےگا۔ شاہدخاقان عباسی نے بتایاکہ پاکستان بارڈرسیکیورٹی کیلئےبھی اقدامات کررہاہے۔نائین الیون  کےبعد پاکستان ہی تھاجس نےالقاعدہ کوختم کرنےمیں کرداراداکیا۔

وزیراعظم نے کہاکہ قيام امن کيلئے پاکستان اقوام متحدہ کے صف اول کے ممبران ميں شامل ہے۔دہشتگردي کيخلاف پاکستان کي کوششوں پرسوال نہيں جاسکتا۔دہشتگردي کيخلاف جنگ ميں سويلين اور فوجيوں نے قرباني دي۔

انھوں نے مزیدکہاکہ جنگ کے باعث معيشت کو بيس ملين ڈالر سے زائد نقصان ہوا۔ وزیراعظم نے تجویزدی کہ دہشتگردي ايک عالمي مسئلہ ہے جسے وسيع بنيادوں پر حل کرنا ہوگا۔دہشتگردی کاخاتمہ معاشی بہتری کیلئےضروری ہے۔سی پیک خطے کی معاشی صورتحال بہتربنائےگا۔ سماء

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube