Wednesday, October 20, 2021  | 13 Rabiulawal, 1443

شنیرا اور وسیم اکرم کی آوازوں پرکان دھریے

SAMAA | - Posted: Oct 6, 2020 | Last Updated: 1 year ago
SAMAA |
Posted: Oct 6, 2020 | Last Updated: 1 year ago

فائل فوٹو

گزشتہ سال ستمبر میں کراچی میں ساحل سمندر کی ابتر صورتحال کے خلاف سوشل میڈیا پر مہم کا آغاز کرنے والی شنیرا نے ایک بار اس حوالے غم وغصے کا اظہار کرتے ہوئے آئندہ ساحل سمندر پر نہ جانے کا فیصلہ کیا تھا لیکن پھرذمہ داری اٹھائے بغیر رہ نہ سکیں ۔ اس بار وسیم اکرم بھی ان کے ساتھ ہیں۔

کراچی کا معروف ساحلی مقام سی ویو کبھی باہر سے آنے والوں کے علاوہ خود اس شہر کے باسیوں کیلئے بھی انتہائی کشش کا حامل ہوتا تھا لیکن بتدریج کچرے اور فضلے کے باعث اس کی حالت انتہائی خراب ہوتی چلی گئی۔

شنیرااکرم نے اہم بیڑہ اٹھالیا

شنیرا اکرم نے ساحل پرگندگی کی تصاویردیکھنے کے بعد وہاں جا کر سی ویو کی چشم کشا صورتحال بیان کی۔ ٹوئٹر پر شیئر کی جانے والی تصویر میں ساحل پر موجود کچرہ اور گندگی واضح دکھائی دے رہی ہے۔

شنیرانے ٹویٹ میں لکھا”ہمارا شہر روزانہ بتا رہا ہے کہ وہ تکلیف میں ہے، ہم مدد کیلئے آواز بھی بُلند کررہے ہیں لیکن کوئی سُننے والا نہیں۔ یہ سلسلہ اب رکنا چاہیے، یہ ہمارے شہر، لوگوں اورثقافت کیلئے باعث شرم ہے۔ ہم ایسے نہیں ہیں”۔

مختلف ٹویٹس میں اس حوالے سے آواز اٹھانے والی شنیرا نے کراچی کو ایک لاوا اگلنے والے پہاڑ سے تشبیہہ دیتے ہوئے کہا کہ صرف ساحلنہیں بلکہ شہر میں ہر جگہ کچرا موجود ہے۔ گلی کوچوں، اسکولوں ، مکانوں اوردفاتر کے باہر،یہاں تک کہ ہمارے واحد ساحل پر بھی گندگی کے ڈھیر ہیں جس میں ہم تیراکی کررہے ہیں”۔

شنیرا کے ساتھ ساحل پر جانے والے وسیم اکرم نے بھی ٹوئٹر پر ایک ویڈیو شیئر کی جس میں وہ اس بات پر افسوس کا اظہارکرہے ہیں کہ شنیرا کویہاں لائے ہی کیوں۔

ویڈیو پیغام میں مایوس دکھائی دینے والے لیجنڈ کرکٹرنے کہا کہ ہفتے کے پہلے روز اہلیہ کو سی ویو پرلا کر بہت بڑی غلطی کی۔وہ پوری دنیا کوکہتی ہے کہ پاکستان بہت خوبصورت ملک ہے اور یہاں کے لوگ بہت خوبصورت ہیں۔

وسیم اکرم نے کہا کہ لوگ خوبصورت ہیں لیکن گندے بھی ہیں، یہ بات بھی مانیں۔ کسی پر الزام کے بجائے اس گندگی کو پھیلانے کے ذمہ دار ہم خود ہیں کیونکہ سمندرمیں ہمارا پھینکا ہوا گند کچرا ہی ساحل پرجمع ہوتا ہے۔

گزشتہ سال شنیرا کی جانب سے ساحل سمندر پر اسپتالوں کے فضلے کی نشاندہی کے بعد سندھ پولیس کی جانب سے معاملے کا نوٹس لیتے ہوئے ساحل پرجانے والوں کی حفاظت کے پیش نظر دفعہ 144 نافذ کردی گئی تھی۔ آفیشل ٹوئٹر پیج پر پیغام میں کہا گیا کہ پولیس نے ساحل کے متاثرہ علاقے کو بند کردیا ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube