ہوم   > فیشن ، لائف اسٹائل

فیشن ڈیزائنر کےشوہر کی رہائی حکومت پر سوالیہ نشان ہے

SAMAA | - Posted: Mar 25, 2020 | Last Updated: 2 weeks ago
SAMAA |
Posted: Mar 25, 2020 | Last Updated: 2 weeks ago

تجزیہ کار احمد ولید کی سماء کے پروگرام میں گفتگو

سندھ حکومت کی جانب سے لاک ڈاؤن کے اعلان اب تک 712 شہریوں کو گرفتار جبکہ 215 مقدمات درج کئے جاچکے ہیں۔شہریوں کو باہر نکلے پر سزایں دی جارہی ہیں پنجاب میں بھی تقریباً 5 ہزار لوگوں کو گرفتار کیا جاچکا ہے تاہم ایسے میں معروف ڈیزائنر ماریہ بی کے شوہر لاہور کی پولیس نے گرفتار کے چند گھنٹوں میں ضمانت پر رہا کردیا ۔

لاہور پولیس نے گزشتہ روز ڈیزائنر ماریہ بی کے شوہر کو اس الزام میں گرفتار کیا کہ انہوں اپنے ملازم کے کورونا ٹیسٹ کی رپورٹ مثبت آنے پر بجائے اسپتال بھیجنے کے اسے اس کے گاؤں بھیج دیا تھا جس کے زندگیاں خطرے میں آگئی ۔

سماء کے پروگرام 7سے 8 میں گفتگو کرتے ہوئے تجزیہ کار احمد ولید کا کہنا تھا کہ یہ ایک سنجیدہ مسئلہ ہے انہوں نے ایسا کیوں کیا یہ سمجھ سے باہر ہے ایک ذمہ دار شہری ہونے کے ناطے ان کی ذمہ داری تھی کہ اپنے ملازم کو اسپتال پہنچاتے ، ایک پڑھے لکھے جوڑے سے عوام کو ایسی توقع نہیں تھی ۔

چند گھنٹوں رہائی کے سوال پر تجزیہ کار کا کہنا تھا کہ اس کیس میں شخصی ضمانت ہوسکتی ہے لیکن ایک شخص کو پکڑا ہے اور اس بعد ان کی اہلیہ کی ویڈیو سامنے آتی ہے جس میں وہ وزیر اعظم سے فریاد کررہی ہیں کے بعد انہیں فوراً چھوڑ دیا جاتا ہے یہ حکومت پر ایک بہت بڑا سوالیہ نشان ہے ۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں تبدیلی کے نام پر یہ حکومت آئی ہے لیکن بدلہ کچھ نہیں ایسی حکومت جس کا نعرہ تھا 'دو نہیں ایک پاکستان' لیکن حکومت وہی کام کررہی ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ اس سے یہ تاثر جاتا ہے امیر لوگوں کے قانون نہیں ہے جبکہ غریب کیلئے ہے ۔

واضح رہے کہ فیشن ڈیزائنرماریہ بی کا نام ٹوئٹر پر ٹاپ ٹرینڈ میں بھی نظر آیا اور سوشل میڈیا صارفین کی جانب سے انہیں شدید تنقید کا نشانہ بھی بنایا گیا۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube