Saturday, October 31, 2020  | 13 Rabiulawal, 1442
ہوم   > Latest

کالعدم جماعت الدعوۃ کے سربراہ حافظ سعید14روزہ ریمانڈ پر جیل منتقل

SAMAA | - Posted: Jul 24, 2019 | Last Updated: 1 year ago
SAMAA |
Posted: Jul 24, 2019 | Last Updated: 1 year ago

انسداد دہشت گردی کی عدالت نے کالعدم جماعت الدعوۃ کے امیر حافظ سعید کے جوڈیشل ریمانڈ میں مزید 14 روز کی توسیع کرتے ہوئے انہیں جیل بھیجنے کا حکم دے دیا۔

کالعدم تنظیم جماعت الدعوۃ کے سربراہ حافظ سعید کو 7 روزہ جوڈیشل ریمانڈ مکمل ہونے پر بدھ کے روز سخت سیکیورٹی میں گوجرانوالہ انسداد دہشت گردی عدالت میں پیش کیا گیا جہاں جج سعید علی عمران نے حافظ سعید کو مزید 14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل منتقل کرنے کا حکم دے دیا۔ عدالت نے سی ٹی ڈی کو آئندہ پیشی پر چالان پیش کرنے کا بھی حکم دیا۔

حافظ سعید کو سات روزہ جسمانی ریمانڈ مکمل ہونے پر گوجرانوالہ کی انسداد دہشت گردی کی عدالت میں پیش کیا گیا تھا۔ اس موقع پر  سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے۔ اینٹی رائیڈ فورس، ڈولفن فورس، ایلیٹ فورس اور پولیس اہلکاروں کی بڑی تعداد عدالت کے باہر اور احاطے میں تعینات رہی۔

واضح رہے کہ حافظ سعید کو 17 جولائی کو لاہور سے گوجرانوالہ آتے ہوئے محکمہ انسداد دہشت گردی (سی ٹی ڈی) پنجاب نے گرفتار کیا تھا، ان کی گرفتاری نیشنل ایکشن پلان کے تحت عمل میں لائی گئی تھی۔

گرفتاری کے بعد انہیں گوجرانوالہ کی انسداد دہشت گردی کی عدالت میں پیش کیا گیا، جہاں ان کا 7 روزہ ریمانڈ منظور کیا گیا تھا۔ حافظ سعید پر ملکوال میں کالعدم تنظیم کے لیے جگہ حاصل کرنے کا الزام ہے۔

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے نومبر 2008 میں جماعت الدعوۃ کو دہشت گرد تنظیم قرار دیتے ہوئے اس پر پابندیاں عائد کی تھیں، بعد ازاں سال 2014 میں امریکا نے بھی جماعت الدعوۃ کو دہشت گرد تنظیم قرار دیتے ہوئے اس پر مالی پابندیاں عائد کیں اور حافظ سعید کے بارے میں معلومات فراہم کرنے پر ایک کروڑ ڈالر انعام دینے کا بھی اعلان کیا تھا۔

سال 1948 میں پیدا ہونے والے حافظ سعید نے ابتدا میں لشکر طیبہ اور بعد ازاں جماعت الدعوۃ کے ذریعے تنظیم کی بنیاد رکھ کر تنطیمی سرگرمیوں کا ٓاغاز کیا، تاہم لشکر طیبہ پر الزامات عائد ہونے کے بعد جماعت الدعوۃ کے ذریعے تنطیمی سرگرمیوں کو آگے بڑھایا۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube