Wednesday, January 19, 2022  | 15 Jamadilakhir, 1443

آسٹریلیا:63فیصد خواتین پارلیمنٹرین جنسی ہراسانی کا شکار

SAMAA | - Posted: Dec 1, 2021 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Dec 1, 2021 | Last Updated: 2 months ago

آسٹریلوی حکومت کے قائم کردہ ایک خصوصی کمیشن کے رپورٹ کے مطابق 63 فیصد خواتین پارلیمنٹرین جبکہ وفاقی پارلیمنٹ کے ایک تہائی ملازمین کو جنسی طور پر ہراساں کیا گیا۔

کمیشن پارلیمنٹ کے ایک سابقہ ملازمہ کے درخواست پر قائم کی گئی تھی جسے اس کے ایک ساتھی نے  ایک وزیر کے دفتر میں ریپ کا نشانہ بنایا تھا۔ کمیشن کے سربراہ کیٹ جینکنز کا کہنا ہے کہ متاثرین میں اکثریت خواتین ہیں۔

سیٹ دی اسٹینڈرڈ کے عنوان سے جاری رپورٹ کے مطابق پارلیمنٹ کے 51 فیصد عملے کو کسی نہ کسی طرح کی غنڈہ گردی، جنسی ہراسانی، حقیقی یا جنسی حملے کی کوشش کا سامنا کرنا پڑا۔

کمیشن کے سربراہ کیٹ جینکنز کا کہنا ہے کہ اس طرح کے تجربات متاثرہ افراد اور ان کی ٹیموں کے لیے تباہ کن اور ملک کےلیے نقصان دہ ہے۔

منگل کو وفاقی پارلیمان میں پیش کیے جانے والے اس جائزے میں 1,723 افراد اور 33 تنظیموں کے انٹرویو کیے گئے۔ آسٹریلوی وزیر اعظم اسکاٹ موریسن نے رپورٹ کو خوفناک قرار دیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق 63 فیصد خواتین ملازمین کے علاوہ ممبران پارلیمنٹ بھی کسی نہ کسی وقت جنسی ہراسانی کا شکار ہوئیں۔

رپورٹ میں تجویز دی گئی کہ قیادت اور صنفی توازن کو بہتر بنایا جائے جبکہ شراب نوشی کے کلچر کو کم کرنے سمیت مختلف سفارشات پیش کی گئیں۔ آسٹریلیا کے وزیر اعظم نے کہا ہے کہ ان کی انتظامیہ نے رپورٹ کی 28 سفارشات کو اپنانے پر اتفاق کیا ہے۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube