Saturday, November 27, 2021  | 21 Rabiulakhir, 1443

طالبان اور بھارت کا رابطہ ہوگیا

SAMAA | - Posted: Oct 21, 2021 | Last Updated: 1 month ago
SAMAA |
Posted: Oct 21, 2021 | Last Updated: 1 month ago

طالبان رہنماؤں اور بھارتی حکومت کے نمائندوں کا بالآخر باضابطہ رابطہ ہوگیا، دونوں جانب کے اعلیٰ سطحی وفود نے ماسکو میں ایک دوسرے سے ملاقات کی۔

طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد کے مطابق افغانستان کے لیے بھارت کے خصوصی نمائندے جے پی سنگھ و دیگر نے افغانستان کے نائب وزیر اعظم عبدالسلام حنفی اور وزیر خارجہ عامر خان متقی کے ساتھ تبادلہ خیال کیا اور کابل حکومت کو امداد کی پیش کش بھی کی۔

ذبیح اللہ مجاہد کا اپنے ٹویٹر پیغام میں کہنا ہے کہ دونوں فریق ایک دوسرے کے تحفظات پر غور کرنا اور سفارتی اور اقتصادی تعلقات بہتر بنانا ضروری سمجھتے ہیں۔ ان کے مطابق جے پی سنگھ جو بھارتی وزارت خارجہ میں جوائنٹ سکریٹری بھی ہیں کا کہنا تھا کہ افغانستان مشکل صورت حال سے گزر رہا ہے اور  بھارت افغانستان کو انسانی ہمدردی کی بنیاد پر امداد دینے کے لیے تیار ہے۔

بھارت نے بھی بدھ کے روز ماسکو میں افغان کانفرنس کے بعد 10 ملکوں کی طرف سے جاری کردہ اس بیان کی تائید کی ہے جس میں افغانستان پر طالبان کی حکومت کو ایک نئی حقیقت کے طور پر تسلیم کیا گیا ہے۔

بھارت نے طالبان کے نائب وزیر اعظم اور دیگر رہنماؤں کے ساتھ اس ملاقات کے بارے میں فی الحال کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے تاہم عالمی میڈیا نے حکومتی ذرائع سے اس ملاقات کی تصدیق کی اور کہا کہ بھارت امدادی سامان کی ایک بڑی کھیپ افغانستان کو انسانی امداد کے طور پر بھیجنے پر غور کر رہا ہے۔

گزشتہ چند ماہ کے دوران گوکہ دوحہ میں بھارتی سفیر نے طالبان کے رہنماؤں سے سرسری ملاقات کی تھی اور ایک بھارتی وفد نے دوحہ میں کثیر ملکی میٹنگ میں حصہ بھی لیا تھا۔ لیکن بدھ کے روز پہلی مرتبہ بھارتی وزارت خارجہ کے اعلی عہدیداروں نے طالبان کے نائب وزیر اعظم سمیت دیگر اعلیٰ رہنماؤں سے تبادلہ خیال کیا۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube