Sunday, September 26, 2021  | 18 Safar, 1443

افغانستان:طالبان نے 7 افغان پائلٹس کو قتل کر دیا گیا

SAMAA | - Posted: Jul 9, 2021 | Last Updated: 3 months ago
SAMAA |
Posted: Jul 9, 2021 | Last Updated: 3 months ago

افغانستان میں امریکی افواج کے انخلا کے بعد 7 افغان پائلٹس کو ٹارگٹ کلنگ کے ذریعے قتل کردیا گیا ہے۔

برطانوی خبر رساں ادارے رائٹرز کے مطابق افغانستان میں طالبان نے فضائیہ کے پائلٹوں کی ٹارگٹ کلنگ شروع کردی ہے، جب کہ طالبان نے ایرانی سرحد کے قریب شہر اسلام قلعہ پر بھی قبضہ کرلیا۔ افغان فضائیہ کے 7 پائلٹ کی ٹارگٹ کلنگ کی سرکاری سطح پر بھی تصدیق کردی گئی ہے۔

رائٹرز کی جانب سے 2 پائلٹس کے ناموں کی بھی تصدیق کی گئی ہے، تاہم یہ نام میڈیا کے سامنے نہیں لائے گئے ہیں۔ دوسری جانب ذبیح اللہ مجاہد نے بھی افغان ایئر فورس کے میجر دستگیر زمارے کو قتل کرنے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

Afghan National Army 215th Corps soldiers load a simulated casualty onto a Black Hawk helicopter during a casualty evacuation drill at Camp Shorabak in Helmand Province, Afghanistan July 14, 2018. Picture taken July 14, 2018. To match Special Report USA-AFGHANISTAN/PILOTS  U.S. Marine Corps/Sgt. Luke Hoogendam/Handout via REUTERS

ترجمان طالبان کا کہنا ہے کہ یہ پائلٹ اپنے ہی لوگوں پر بم گراتے ہیں اس لیے ان کو مار رہے ہیں۔ امریکی حکام بھی افغان پائلٹوں کی ٹارگٹ کلنگ سے آگاہ ہیں۔ پائلٹوں کو جنگ سے زیادہ چھٹی کے دنوں میں جان کا خطرہ رہتا ہے۔ افغان حکام کا کہنا ہے کہ فضائیہ کے پائلٹس افغان طالبان کی ٹاپ ہٹ لسٹ پر ہیں۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز امریکی صدر جوزف بائیڈن نے کہا ہے کہ افغان مسئلے کے سیاسی حل کے لیے خطے کے ممالک کو آگے آنا ہوگا، کابل پر طالبان قبضہ نہیں کرسکتے، افغان فورسز کی قابلیت پر بھروسہ ہے۔ افغان طالبان اس وقت فوجی لحاظ سے 2001 کے بعد کی مضبوط ترین پوزیشن پر ہیں۔

امریکی انٹیلی جنس رپورٹ کے مطابق کم سے کم 6 مہینوں میں افغان حکومت گر سکتی ہے۔

An Afghan Air Force Mi-17 helicopter pilot prepares to depart, to be the air support for the final scenario of Air Liaison Officer School, at Kabul International Airport, Afghanistan November 25, 2014. Picture taken November 25, 2014. To match Special Report USA-AFGHANISTAN/PILOTS     U.S. Air Force/Staff Sgt. Perry Aston/Handout via REUTERS

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ واشنگٹن پہلے ہی ان مترجم کو افغانستان سے باہر نکالنے کیلئے اقدامات شروع کرچکی ہے، جو امریکی انخلا سے پہلے امریکی حکومت کیلئے کام کرتے رہے ہیں، تاہم یہ بات اب تک امریکی انتظامیہ کی جانب سے سامنے نہ آسکی کہ آیا مستقبل میں وہ قتل کے خطروں سے دوچار افغان پائلٹس کو بھی افغانستان سے نکالنے کیلئے کوئی اقدامات کریں گے یا نہیں۔

واضح رہے کہ افغان ایئر فورس پو پہلے ہی بحران کو سامنا ہے، جہاں تنکیکی عملہ اور طیاروں کی بہتر کھیپ موجود نہیں۔ افغان ایئرفورس ذرائع کے مطابق ایک پائلٹ کو تیار کرنے، اس کی ٹریننگ اور مہارت میں سالوں درکار ہوتے ہیں، جنہیں طالبان کی جانب سے ایک سیکنڈ کی تاخیر کے بغیر قتل کیا جا رہا ہے اور دیگر پائلٹس کی جان بھی خطرے میں ہے۔

افغان ایئر فورس کے مطابق پائلٹس کے ساتھ ساتھ ان کے اہل خانہ کی جانوں کو بھی خطرہ لاحق ہے۔ جس کیلئے کوشش کی جا رہی ہے کہ انہیں بیسز کے اندر ہی رہائش دی جائے یا کسی ایسے محفوظ مقام پر رکھا جائے جہاں وہ ٹارگٹ کلنگ کا شکار نہ ہوسکیں۔

WhatsApp FaceBook
تازہ ترین
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube