Friday, July 3, 2020  | 11 ZUL-QAADAH, 1441
ہوم   > بین الاقوامی

ایران نے ڈونلڈ ٹرمپ کے وارنٹ گرفتاری جاری کردیے

SAMAA | - Posted: Jun 29, 2020 | Last Updated: 4 days ago
SAMAA |
Posted: Jun 29, 2020 | Last Updated: 4 days ago

ایران نے بغداد میں ڈرون حملے کے ذریعے ایرانی جنرل قاسم سلیمانی کو قتل کرنے پر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے وارنٹ گرفتاری جاری کرتے ہوئے انٹرپول سے ٹرمپ اور متعدد دیگر امریکی حکام کو گرفتار کرنے کیلئے مدد طلب کرلی۔

الجزیرہ کی رپورٹ کے مطابق ایرانی پراسیکیوٹر علی القاصی مھر نے پیر کو ایک ایرانی نیوز ایجنسی کو بتایا کہ ٹرمپ اور 30 دیگر افراد پر قاسم سلیمانی کے قتل کا الزام ہے۔ القاصی نے ٹرمپ کے علاوہ دیگر کے نام نہیں بتائے تاہم انہوں نے کہا کہ ایران اس کیس کی پیروی ٹرمپ کی صدارتی مدت ختم ہونے کے بعد بھی جاری رکھے گا۔

انٹرنیشنل کرمنل پولیس آرگنائزیشن (انٹرپول) جرائم کے سد باب کیلئے دنیا کے بیشتر ممالک کی پولیس کو معاونت فراہم کرتی ہے اور اس کا صر دفتر فرانس کے شہر لیون میں ہے۔  انٹرپول نے ایران کی اس درخواست کے حوالے سے فی الحال کوئی تبصرہ نہیں کیا۔

القاصی کا کہنا ہے کہ ایران نے انٹرپول سے ٹرمپ و دیگر کے خلاف ریڈ نوٹس کے اجراء کی بھی درخواست کی ہے۔ ریڈ نوٹس انٹرپول کا ایک اعلیٰ سطح کا نوٹس ہوتا ہے جس کے تحت مقامی حکام درخواست دہندہ ملک کی جانب سے مطلوبہ افراد کو گرفتاری کرتے ہیں۔ کسی بھی ملک کی جانب سے ایسی درخواست موصول ہونے کے بعد انٹرپول اپنے اجلاس میں معاملے پر غور کرتی ہے تاہم انٹرپول اس بات کی پابند نہیں کہ ایسے معاملے یا نوٹس کی تفصیلات پبلک کرے۔

ریڈ نوٹس کے ذریعے انٹرپول کسی بھی ملک کو کسی مشتبہ شخص کی گرفتاری یا ملک بدری پر مجبور نہیں کر سکتی تاہم وہ متعلقہ حکومت پر ایسے فرد یا افراد کے سفر کو محدود کرنے کا کہہ سکتی ہے۔

قاسم سلیمانی پاسدارن انقلاب کی ذیلی شاخ قدس فورس کے سربراہ تھے جنہیں دیگر افراد کے ہمراہ 3 جنوری 2020  کو بغداد میں ڈرون حملے کے ذریعے قتل کر دیا گیا تھا۔ رہبر ایران سید علی خامنہ ای نے قاسم سلیمانی کی خدمات کے اعتراف میں انہیں شہید زندہ کا خطاب دیا ہے۔

اس واقعے کے بعد ایران اور امریکا میں کشیدگی میں اضافہ ہوا تھا جس کے انتقام کے طور پر ایران نے عراق میں مقیم امریکی فوجیوں کو میزائیلوں کا نشانہ بنایا تھا۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube