Wednesday, October 21, 2020  | 3 Rabiulawal, 1442
ہوم   > بین الاقوامی

مصر میں ساڑھے3 ہزار سال پرانی لڑکی کی باقیات دریافت

SAMAA | - Posted: May 5, 2020 | Last Updated: 6 months ago
SAMAA |
Posted: May 5, 2020 | Last Updated: 6 months ago

مصر میں ماہر آثار قدیمہ کو کھدائی کے دوران ایک ایسی لڑکی کی باقیات ملی ہیں، جو قیمتی زیورات پہنے ہوئی تھی۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ باقیات 3500 سال پرانی ہے۔

ٹائمز آف اسرائیل کے مطابق مصر میں ایک مقبرے سے ایسی لڑکی کی باقیات دریافت کی گئی ہیں، جو ساڑھے 3 ہزار سال پرانی ہیں۔ ان باقیات کی خاص بات یہ ہے کہ ساڑھے 3 سال قبل مرنے والی اس لڑکی کی باقیات کے ساتھ قیمتی زیورات بھی موجود تھے۔ باقیات کو دیکھ کر ایسا لگتا ہے کہ جیسے وہ کوئی دلہن تھی۔

ان باقیات کو ہسپانوی ماہر آثار قدیمہ نے دریافت کیا۔ باقیات مصر کے تاریخی شہر لگسر کے قریب ایک کھدائی کے دوران دریافت ملے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ اس لڑکی کی عمر 15 یا 16 سال کے لگ بھگ تھی۔

ایجنسی رپورٹ کے مطابق لڑکی نے 2 پیچ دار بالیاں پہن رکھی تھی جن میں سے ایک کان پر موجود بالی پر تانبے کی پتی چڑھی ہوئی تھی۔ جب کہ انگلیوں میں اس نے 2 انگوٹھیاں اور گلے پر بھی اس نے 4 ہار پہن رکھے تھے۔ لڑکی کی باقیات 1580سے 1550قبل مسیح کی معلوم ہوتی ہیں جو کہ فراعین مصر کے سترہویں حکمران خاندان کا عہد رہا ہے۔

ماہرین کو قبر کی کھدائی کے دوران لڑکی کے پاؤں میں پہننے کیلئے رکھی گئی ایک چپل کی جوڑی بھی ملی۔ لڑکی کی باقیات جس لکڑی کے تابوت سے ملی ہیں وہ 5 فٹ 7 انچ لمبی ہے جوکہ ایک کاٹن کی شیٹ میں لپٹی ہوئی تھی ۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے :

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube