ہوم   > بین الاقوامی

قيديوں کی رہائی کے معاملےپر طالبان، افغان حکام میں گفتگو

SAMAA | - Posted: Mar 23, 2020 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Mar 23, 2020 | Last Updated: 2 months ago

فوٹو: اے ایف پی

امريکا اور طالبان کے معاہدے کے تحت قيديوں کی رہائی کے معاملے پر طالبان اور افغان حکام ميں اسکائپ پر پہلی بات چيت ہوئی۔

امريکا کے نمائندہ خصوصی زلمے خليل زاد نے ٹویٹر پر کہا کہ امريکا اور قطر نے اس ویڈيو کانفرنس کا اہتمام کيا۔ جب تک دونوں جانب کے قيدی رہا نہيں ہوں گے تب تک امن عمل آگے بڑھنا دشوار ہوگا۔

زلمے خليل زاد نے تصديق کرتے ہوئے کہا کہ تکنيکی مسائل کے حل پر تبادلہ خيال کیا گیا۔

واضح رہے کہ امریکا اور افغان طالبان نے 29 فروری 2020 کو امن معاہدے پر دستخط کیے۔ طالبان کی جانب سے ملا عبدالغنی برادر اور امریکا کی جانب سے نمائندہ خصوصی زلمے خلیل زاد نے امن معاہدے پر دستخط کیے۔

تقریب کا انعقاد قطر کے دارالحکومت دوحہ میں واقع ایک ہوٹل میں کیا گیا۔ معاہدے کی اس اہم تقریب میں پاکستان سمیت 50 ممالک کے وزرائے خارجہ اور طالبان کے وفد نے شرکت کی۔

امریکا اور طالبان کے درمیان قطر کے دارالحکومت دوحہ میں 18 ماہ تک مذاکرات جاری رہے۔

WhatsApp FaceBook

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

متعلقہ خبریں
WhatsApp FaceBook
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube