ہوم   > بین الاقوامی

لندن برج حملہ : چاقو سے وار کرنے والا کون تھا؟

SAMAA | - Posted: Nov 30, 2019 | Last Updated: 2 months ago
SAMAA |
Posted: Nov 30, 2019 | Last Updated: 2 months ago

لندن کے علاقے لندن برج پر چاقو سے حملہ کرنے والے شخص کو شناخت کرلیا گیا ہے۔ حملہ آور کا نام عثمان خان ہے، جس کی عمر 28 سال تھی۔ برطانوی میڈیا نے حملہ آور کو پاکستانی شہری قرار دے دیا۔


برطانوی ذرائع ابلاغ سے جاری خبروں کے مطابق 28 سالہ عثمان خان کے حملے میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 3 ہوگئی ہے، جب کہ حملے میں 3 افراد زخمی بھی ہوئے۔ برطانوی پولیس حکام کے مطابق ملزم پہلے بھی جيل کاٹ چکا ہے۔

لندن : حملہ آور کا چاقو سے وار،3 افراد ہلاک،2زخمی

عثمان کو ایک سال قبل اس شرط پر رہائی ملی تھی کہ وہ الیکٹرانک ٹیگ کو پہنے رکھے گا تاکہ اس کی نقل و حرکت پر نظر رکھی جا سکے۔ چاقو سے لیس حملہ آور نے گزشتہ روز لندن برج میں قیدیوں کی بحالی کے سلسلے میں کیمبرج یونیورسٹی کی کانفرنس کے قریب حملہ کیا تھا۔ اس تقریب میں درجنوں افراد یونیورسٹی کے طلبا اور سابق قیدی موجود تھے

 

عثمان خان کے نام سے ظاہر کی گئی شناخت والا شہری اسٹیفرڈ شائر کا رہائشی تھا۔ مقامی پولیس کے مطابق حملہ آور نے جمعہ کی دوپہر لندن میں چاقو مار کر خاتون سمیت 2 افراد کو ہلاک اور 3 کو زخمی کیا۔ برطانوی پولیس نےعثمان خان کے اسٹریفرڈ شائر میں واقع گھر پر رات گئے چھاپہ مارا۔ اس سے قبل عثمان خان کے گھر پر چھاپے کے دوران ہاتھ سے لکھی گئی ایک لسٹ بھی ملی تھی جس میں اس نے کچھ لوگوں اور جگہوں کے نام لکھے ہوئے ہیں، جس میں برطانوی وزیراعظم بورس جانسن، امریکی سفارتخانہ، دو یہودیوں کے نام سمیت دیگر تفصیلات تھیں۔

حملہ آور سال 2018 میں جیل سے رہا ہوا تھا اور اس پر دہشت گرد تنظیموں سے رابطوں کا الزام تھا۔ برطانوی میڈیا کا یہ بھی کہنا ہے کہ ملزم پر الزام ہے کہ اس نے آزاد کشمیر میں اپنے اہل خانہ کی زمین پر قبضے کی کوشش کی۔

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ عثمان خان اُن 9 مجرموں میں سے ایک تھا، جنہیں سال 2010ء میں لندن اسٹاک ایکسچینج پر حملے کی سازش میں سال 2012ء سے سال 2018ء تک جیل کی سزا ہوئی تھی۔ ٹیلی گراف کے مطابق عثمان خان نے اسکول کی تعلیم بھی مکمل نہیں کی تھی اور اسے درمیان میں ہی چھوڑا دیا تھا۔

حملے کے وقت 28 سالہ عثمان نے نقلی خودکش جیکٹ بھی پہنی ہوئی تھی۔ یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ خودکش جیکٹ کی پرواہ کیے بغیر اس شخص نے حملہ آور کو روکنے کی کوشش کی جو خود بھی جیل کاٹ کر آیا تھا۔

حملہ آور سے چاقو چھین کر فرار ہونے والے عام شہری کو ہیرو قرار دیا گیا ہے۔ سوشل میڈیا پر لوگوں نے اس کی بہادری کی تعریف کی ہے۔ شہریوں نے حملہ آور کو قابو کرنے کیلئے پہلے اس پر آگ بجھانے والے آلے سے اسپرے کیا اور پانی پھینکا، جس سے وہ ایک لمحے کیلئے بے بس ہوگیا۔ تاجر کا میڈیا سے گفتگو میں کہنا تھا کہ میں نے حملہ آور کے سر پر لات ماری اور اس سے چھری چھینی۔

واضح رہے کہ چاقو بردار حملہ آور کے حملے میں 3 افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہوئے۔ بعد ازاں حملہ آور کو پولیس نے فائرنگ کرکے ہلاک کیا۔ پولیس کے مطابق آپریشن 5 منٹ میں ہی مکمل کرلیا گیا تھا۔ حملے پر صادق خان کی جانب سے بھی تفصیلی بیان جاری کیا گیا ہے۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں
 
 
 
 
 
 
 
 
 
مقبول خبریں
مقبول خبریں
 
 
 
 
 
 
Facebook Twitter Youtube