ہوم   > بین الاقوامی

جنگ بندی کے باوجود اسرائیل کے غزہ میں فضائی حملے

3 weeks ago

فوٹو: اے ایف پی

اسرائیل نے جنگ بندی کے باوجود غزہ میں فلسطینیوں پر فضائی حملے شروع کر دیے جس سے اسکول کے بچوں سميت ايک ہی خاندان کے 8 افراد شہيد ہوگئے جبکہ 12 زخميوں کی حالت تشویشناک ہے۔

غیرملکی خبر رساں ادارے الجزیرہ کے مطابق اسرائیلی فوج نے الزام لگایا ہے کہ غزہ کی جانب سے راکٹ حملوں کے بعد اسلامی جہاد کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔

گزشتہ روز مصر کی ثالثی کے باعث اسرائیل کے ساتھ جنگ بندی پر اتفاق کرلیا گیا تھا تاہم اسرائیل نے اسکی تصدیق نہیں کی تھی۔

اسلامی جہاد کا اسرائیل کیساتھ جنگ بندی پر اتفاق

تین روز قبل اسرائیل نے فضائی حملے میں اسلامی جہاد کے کمانڈر ابو العطا کو انکی اہلیہ سمیت شہید کیا تھا جس کے بعد فائرنگ کا تبادلہ شروع ہوا۔ وزارتِ صحت کے مطابق دو روز کے دوران اسرائیلی فضائی حملوں میں 34 فلسطینی شہید ہوئے جبکہ غزہ سے اسرائيل پر کيے گئے راکٹ حملوں ميں 63 اسرائيلی بھی زخمی ہوچکے ہيں۔

جنگ بندی معاہدے میں یہ شرط عائد کی گئی تھی کہ مظاہرے کے دوران فلسطینی دھڑوں کو غزہ میں پر امن قیام اور ’’امن برقرار رکھنے‘‘ کی واپسی کو یقینی بنانا ہوگا جب کہ فلسطینیوں کے مظاہروں کے دوران اسرائیل کو دشمنی بند کرنے اور ’’جنگ بندی کو یقینی بنانا‘‘ چاہیئے۔

گریٹ مارچ آف ریٹرن کے نام سے ہفتہ وار مظاہروں کا سلسلہ مارچ 2018 میں شروع ہوا جس میں مطالبہ تھا کہ فلسطینیوں کی زمین سے قبضہ اور فضائی محاصرہ ختم کیا جائے۔

 

آپ کے تبصرے

Your email address will not be published.

 
متعلقہ خبریں
 
 
 
 
 
 
 
Israel, Palestine, Gaza, ceasefire, Islamic Jihad, rockets attack, Egypt